The news is by your side.

Advertisement

این اے 122 میں ڈالے گئے جعلی ووٹوں کی تفصیلات جاری

لاہور: الیکشن ٹریبونل نےقومی اسمبلی کےحلقہ ایک سو بائس میں ڈالے گئے جعلی ووٹوں کی تفصیلات جاری کردیں، 10 ہزار سے زائد شناختی کارڈ ناقابل اعتبار، سترہ سو کاؤنٹر فائلز سے انگوٹھوں کے نشان غائب، پانچ سو ستر ووٹروں کا تعلق دوسرے حلقوں سےتھا۔

الیکشن ٹریبونل نے ایاز صادق کو ڈالے گئے جعلی ووٹوں کی تفصیلات جاری کردیں ہیں، ٹریبونل کے فیصلے میں دی گئی تفصیل کے مطابق چھ ہزار ایک سو تئیس کاؤنٹر فائلز پر شناختی کارڈ جعلی تھے، تین ہزار چار سو چالیس شناختی کارڈز کے نمبر پڑھے جانے کے قابل نہیں تھے۔

تیرہ سو اسی ووٹ یا تو جعلی تھے یا انکا کا کوئی ریکارڈ موجود نہیں تھا تھیلوں سے بارہ سو ستر بیلٹ پیپرزغائب پائے گئے، تین سو ستر ووٹوں پرشناختی کارڈ نمبرموجودنہیں تھے، سترہ سو نو کاؤنٹرفائلزپرانگوٹھوں کےنشانات موجود نہیں تھے اور تو اور دو سو پچپن ووٹرز نے ایک سے زائد بار ووٹ ڈالے جبکہ پانچ سو ستر ایسے افراد نے بھی ووٹ ڈالے جو دوسرے حلقوں میں بطور ووٹر رجسٹر تھے۔

انتکابی عمل میں چھپائی کی غلطیاں بھی موجود تھیں یعنی تین سو پندرہ کاؤنٹرفائلز پر سیریل نمبر ہی نہ تھے پریزائڈنگ افسر اتنے سست تھے کہ تئیس ہزار نو سو ستاون کاؤنٹر فائلز پر ان کے دستخط ہی نہیں تھے۔

ٹریبونل نے فیصلے میں کہا ہے کہ انتخابی عملہ اپنےفرائض انجام دینےمیں بری طرح ناکام رہا، اس لئے این اے ایک سوبائیس پرانتخابات کالعدم قرار دیاجاتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں