The news is by your side.

Advertisement

ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ پر سپریم کورٹ کافیصلہ : عمران خان نے نظرثانی اپیل دائر کردی

اسلام آباد : چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ پر سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی اپیل دائر کردی، جس میں عدالت عظمیٰ کا فیصلہ پارلیمانی کارروائی میں مداخلت اور آرٹیکل انہتر سے متصادم قرار دیا۔

تفصیلات کے مطابق ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کی رولنگ پر سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی درخواست دائر کردی ، عمران خان نے نظرثانی درخواست دائر کی۔

درخواست میں کہا گیا کہ آرٹیکل 248پارلیمنٹ کی کارروائی پر مداخلت سے روکتا ہے، ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ آرٹیکل 5 کے مطابق تھی، ڈپٹی اسپیکر نے وزیراعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد مسترد کی۔

دائر درخواست میں کہا کہ درخواست گزار نے رولنگ کے بعد قومی اسمبلی تحلیل کی ایڈوائس دی، اسمبلی تحلیل کی سفارش کے وقت کوئی تحریک عدم اعتماد زیر التوا نہیں تھی، فیصلے میں ریکارڈ سامنے آیا نہ نشاندہی کی گئی کہ اسمبلی تحلیل کرنے کی تجویز غیر آئینی تھی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ آرٹیکل 248 درخواست گزار کو آئینی اختیارات سے متعلق کسی عدالت کے سامنے جوابدہ نہیں بناتا، سپریم کورٹ کا فیصلہ پارلیمانی کارروائی میں مداخلت اور آرٹیکل 169 سے متصادم ہے، عدالت کا قومی اسمبلی کے 342 اراکین کو ڈائریکشن دینے کے فیصلے کی ماضی میں کوئی نظیر موجود نہیں۔

درخواست میں استدعا کی گئی کہ ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ کو غیر آئینی قرار دینے کے فیصلے پر نظرثانی کی جائے اور نظر ثانی پرحتمی فیصلے تک 7 اپریل کا فیصلہ معطل کیا جائے۔

دائر اپیل میں کہا گیا کہ اسپیکر یا ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی کی رولنگ کا عدالت جائزہ نہیں لے سکتی ، 7 اپریل کے فیصلے سے اختیارات کی تقسیم کے آئینی اصول سے انحراف کیا گیا، عدالتیں پارلیمانی کارروائی پر تجاوز نہیں کرسکتی۔

عمران خان نے کہا کہ قومی سلامتی کمیٹی ،متعلقہ حکام نے دھمکی آمیز مراسلہ بھجوایا، اسی بنیاد پر ڈپٹی اسپیکر نے تحریک عدم اعتماد کیخلاف رولنگ دی، ڈپٹی اسپیکررولنگ پر ججز کی 2 اپریل کومیٹنگ اور اتوار کوسماعت منفرد ہے ، اتوار کو عدالت لگانے کی کوئی ایمرجنسی نہیں تھی جبکہ آرٹیکل63اےکی تشریح کا ریفرنس بھی زیر التوا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں