The news is by your side.

Advertisement

آصف زرداری کو 19 اگست تک جوڈیشل ریمانڈ پرجیل بھیج دیاگیا

اسلام آباد : پارک لین اور میگا منی لانڈرنگ کیس میں احتساب عدالت نے سابق صدر آصف زرداری کو 19 اگست تک جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد کی احتساب عدالت میں میگا منی لانڈرنگ کیس اورپارک لین ریفرنس پر سماعت ہوئی ، احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے سماعت کی۔

سابق صدر آصف زرداری کو جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر احتساب عدالت میں پیش کیا گیا، سماعت مین آصف علی زرداری روسٹرم پر آئے اور کہا مجھے اجازت کے باوجود عید پر ملنے نہیں دیا گیا، نماز بھی نہیں پڑھنے دیتے، عید کی نماز بھی نہیں پڑھنےدی، عرفان منگی یہاں ہو تو پوچھوں کہ یہ کون سی اسلامی ریاست ہے، عدالتی اجازت کے باوجود میری بیٹی کو مجھ سے ملنے نہیں دیا جاتا۔

پراسیکیوٹر نیب نے بتایا کیس میں ایک نئی پیش رفت ہو گئی ہے، ایک ملزم نے بیان دیا ہےاس کوآصف زرداری سے کنفرنٹ کرانا ہے، مزید جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔

زرداری کے وکیل سردار لطیف کھوسہ کا کہنا تھا کہ پہلےہی کہاتھاایک ہی بار 90 روز کا ریمانڈ دے دیں، 90 روز کا تو نہیں ہو سکتا لیکن 14 روز تو ہو سکتے ہیں، یہ 4 روز کا ریمانڈ لے کر اگلی بار آ کر نیا ریمانڈ مانگ لیتے ہیں، بار بار پیشی سے نقصان سرکاری خزانے کو ہی ہو رہا ہے۔

احتساب عدالت نے آصف زرداری کو 19 اگست تک جوڈیشل ریمانڈ پرجیل بھیج دیااور 19 اگست کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

اس سے قبل آصف زرداری کےجسمانی ریمانڈمیں 5بارتوسیع کی جاچکی ہے، آصف زرداری پارک لین اور میگا منی لانڈرنگ کیس میں جسمانی ریمانڈ پر ہیں۔

یاد رہے گذشتہ سماعت میں جج نے کیس کے تفتشیی افسر سے استفسار کیا کہ آصف زرداری کے جسمانی ریمانڈ کو کتنے دن ہوگئے؟۔ تفتیشی افسر نے جواب دیا تھا کہ آصف زرداری کے ریمانڈ کو 58 دن ہوگئے ہیں۔ جج نے تفتیشی افسر سے پہلے ریمانڈ کی ڈائری اور آج کی ڈائری پیش کرنے کی ہدایت کی، جس پر تفتیشی افسر نے ریکارڈ پیش کردیا تھا۔

اس سے قبل سماعت میں سابق صدر آصف علی زرداری کی میڈیکل رپورٹ عدالت میں پیش کی گئی تھی ، جج محمد بشیر نے کہا تھا ٹھیک ہے 10دن بعد آپ کی نیب سے جان چھوٹ جائے گی، جس پر آصف علی زرداری کا کہنا تھا کہ نیب سے ہم جان چھڑانانہیں چاہ رہے۔

واضح رہے 10 جون کو جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق صدر آصف زرداری اور فریال تالپور کی درخواست ضمانت مسترد کردی تھی اور گرفتار کرنے کا حکم دیا تھا۔

جس کے بعد نیب ٹیم نے سابق صدر آصف زرداری اور فریال تالپور کو گرفتار کرلیا تھا۔

خیال رہے آصف زرداری اور فریال تالپور پر جعلی اکاؤنٹس سے منی لانڈرنگ کاالزام ہے جبکہ جعلی اکاؤنٹس کا مقدمہ احتساب عدالت میں زیر التوا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں