پاکستان کوئی بھی معاملہ عالمی عدالت انصاف لے جا سکتا ہے، نفیس زکریا nafees-zakaria
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان کوئی بھی معاملہ عالمی عدالت انصاف لے جا سکتا ہے، نفیس زکریا

اسلام آباد : ترجمان دفترخارجہ نفیس زکریا نے کہا ہے کہ پاکستان کوئی بھی معاملہ عالمی عدالت انصاف میں لے جاسکتا ہے۔

وہ اسلام آباد میں ہفتہ واربریفنگ دے رہے تھے انہوں نے کہا کہ سی پیک اوبور کا ایک فلیگ شپ منصوبہ ہے جو بنیادی طور پریورپ، ایشیا اور افریقہ کو ملائے گا۔

اس موقع پر ترجمان دفترخارجہ نفیس زکریا نے بتایا کہ اوبور کا گزشتہ ماہ چین میں اجلاس بھی منعقد ہوا اور اس اجلاس میں 100 سے زائد ممالک کے نمائندوں نے شرکت کی تھی۔

ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ اس اجلاس میں باہمی تعاون اور تجارتی راوبط برقرا رکھنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے عام لوگوں کے معیار زندگی کو بلند کرنے کے لیے معاشی اور اقتصادی سرگرمیاں جاری رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ۔

انہوں نے کہا کہ روسی فیڈریشن سے حال ہی میں اعلٰی ترین سیاسی رابطہ ہوا ہے پاکستان اور روسی فیڈریشن میں تعلقات کے اضافے کی خاصی گنجائش ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ نفیس زکریا نے کہا کہ کلبھوشن یادیو کے معاملے پر پاکستان کا موقف واضح اور ٹھوس شواہد پر مبنی ہے اور جسے عالمی عدالت انصاف میں بھی دہرایا گیا ہے اس لیے پاکستان کا کیس بہت مضبوط ہے۔

ایک سوال کے جواب میں ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ چینی حکومت کے ساتھ مغوی چینی شہریوں کےاغوا پر رابطے میں ہیں اورحکومت اس معاملے کو سنجیدگی سے دیکھ رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ چینی مغوی شہریوں کا سی پیک سے کوئی تعلق نہیں تھا اور اس حوالے سے کسی بھی قسم کی قیاس آرائی سے پرہیز کیا جائے۔

خیال رہے اوبور (OBOR) ایک پروجیکٹ One Belt One Road کا مخفف ہے جس سے چین دنیا کے دیگر ممالک سے مواصلاتی طور پر منسلک ہوجائے گا اور یوں دنیا بھر میں تجارتی سرگرمیوں کے نئے دور کا آغاز ہوجائے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں