site
stats
شاعری

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریرکا

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا
کاغذی ہے پیرہن، ہر پیکر ِتصویر کا

آتشیں پا ہوں، گداز ِوحشتِ زنداں نہ پوچھ
موے آتش دیدہ ہے ہر حلقہ یہاں زنجیر کا

شوخیِ نیرنگ، صیدِ وحشتِ طاؤس ہے
دام، سبزے میں ہے، پروازِ چمن تسخیر کا

لذّتِ ایجاد، ناز، افسونِ عرض۔، ذوق ِ قتل
نعل، درآتش ہے تیغِ یار سے نخچیر کا

کاو کا وِ سخت جانیہاے تنہائی نہ پوچھ
صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا

خشت پشتِ دستِ عجزو قالب آغوشِ وداع
پُر ہوا ہے سیل سے، پیمانہ کس تعمیر کا؟

وحشتِ خوابِ عدم، شورِ تماشا ہے اسد
جز مژہ، جوہر نہیں آئینہ تعبیر کا

**********

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top