The news is by your side.

Advertisement

’سچ کی راہ پر گامزن ہوں‘ : سدھو نے فیصلہ واپس لے لیا

چندری گڑھ: بھارتی ریاست پنجاب کے اہم سیاسی رہنما نوجوت سنگھ سدھو نے چالیس روز کے بعد فیصلہ تبدیل کر کے اہم اعلان کردیا۔

بھارتی میڈیا رپورٹ کے مطابق نوجوت سنگھ سدھو نے 28 ستمبر کو کانگریس کے عبوری صدر کی حیثیت سے اپنا استعفیٰ پارٹی صدر سونیا گاندھی کو ارسال کیا تھا۔

انہوں نے اپنے استعفے میں پنجاب کو نظر انداز کرنے پر بھی پارٹی پالیسی پر تنقید کی تھی اور لکھا تھا کہ ’ایک انسان کا کردار زوال اور سمجھوتے سے شروع ہوتا ہے، میں پنجاب کے مستقبل اور بحالی کے ساتھ کبھی سمجھوتہ نہیں کرسکتا‘۔

کانگریس کی صدر نے اس استعفے کو منظور نہ کرتے ہوئے سدھو کو طلب کیا تھا اور ملاقات میں تمام مسائل حل کرنے سمیت دیگر مطالبات کی یقین دہانی کرائی۔

مزید پڑھیں: پریانکا گاندھی کے بعد نوجوت سنگھ سدھو بھی گرفتار

یہ بھی پڑھیں: نوجوت سنگھ سدھو نے سونیا گاندھی کو استعفیٰ بھجوا دیا

آج تقریبا چالیس روز کے بعد سدھو ایک بار پھر میڈیا کے سامنے آئے اور اپنا استعفیٰ واپس لینے کا اعلان کیا۔ انہوں نے واضح کیا کہ وہ عبوری صدر کی حیثیت سے کام نہیں کریں گے بلکہ پارٹی میں ریاستی سربراہ کے عہدے پر خدمات انجام دیں گے۔

انہوں نے واضح کیا کہ اٹارنی جنرل کی تقرری کے وقت عہدے کا چارج سنبھالوں گا، استعفیٰ ذاتی انا کا نہیں بلکہ پنجاب کے مفاد کا معاملہ تھا، مسائل حل ہونے کی یقین دہانی پر اپنا فیصلہ واپس لیا ہے‘۔

سدھو نے مزید کہا کہ ’جو لوگ سچ کی راہ پر گامزن ہوتے ہیں، اُن کے لیے عہدہ کوئی معنی نہیں رکھتا‘۔

Comments

یہ بھی پڑھیں