The news is by your side.

Advertisement

ایسا ماحول بنادیا گیا ہے وکیل کی خدمات سے بھی محروم ہوگیا ہوں، نواز شریف

لاہور: سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف نے کہا ہے کہ خواجہ حارث آج میرے ریرفرنسز سے دستبردار ہوگئے ہیں، ایسا ماحول بنادیا گیا ہے کہ وکیل کی خدمات سے بھی محروم ہوگیا ہوں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا، نواز شریف نے کہا کہ احتساب عدالت سے نیا وکیل کرنے کے لیے وقت مانگا ہے، میرے وکلا کو بغیر تیاری عدالت میں پیش ہونے کا کہا جارہا ہے۔

نواز شریف کے مطابق استغاثہ اپنے دعووں میں ناکام رہا ہے، کیا کوئی ایسا مقدمہ ہے جس کی مانیٹرنگ سپریم کورٹ کا جج کرتا ہو، میرے خلاف دو ریفرنسز کے گواہوں پر جرح بھی نہیں ہوئی ہے، چیف جسٹس نے کہا ایک ماہ میں ہمارے کیس کا فیصلہ دیا جائے، بتایا جائے قانونی تقاضے اہم ہیں یا الیکشن سے پہلے فیصلہ کرنا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ریفرنس سے دستبرداری کی درخواست نیب عدالت کو جمع کرائی ہے، احتساب عدالت نے مجھے نیا وکیل کرنے کی ہدایت کی ہے، کوئی بھی وکیل ہفتہ وار چھٹی، سخت شرائط پر پیش ہونے کو تیار نہیں۔

مسلم لیگ ن کے قائد نے کہا کہ مجھے حق دفاع سے محروم کیا جارہا ہے، ان حالات میں کس کے پاس داد رسی کے لیے جاؤں گا، مجھے اہلیہ سے ملنے کی اجازت نہیں دی جارہی مگر تعاون جاری رکھا، مجھے نہیں معلوم کون سا آئین و قانون اس طرح دل آزاری کی اجازت دیتا ہے۔

نواز شریف نے کہا کہ کیا کوئی ایسا ملزم ہے جس نے آج تک 100 کے قریب پیشیاں بھگتی ہوں، عدالتی کارروائی اور وکلا صفائی پر دباؤ ڈالا گیا، خواجہ حارث نے کبھی بھی پیشی کے لیے تاریخ کا تقاضا نہیں کیا، پاناما سے شروع کھیل کی آخری قسط ظلم کی نذیر ہے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ جے آئی ٹی کیسے بنی، واٹس ایپ کالز کس نے کی، جے آئی ٹی نے کہاں کہاں گل کھلائے، بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر وزیر اعظم ہاؤس سے نکال دیا گیا، اس کے بعد بات نہ بنی تو ضمنی ریفرنسز لائے گئے، ثبوت تو دور کی بات کسی کرپشن کا الزام بھی ثابت نہ کرسکے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں