site
stats
پاکستان

اہم اجلاس، مسلم لیگ (ن) کا جارحانہ رویہ اپنانے کا فیصلہ

لاہور : سابق وزیراعظم نواز شریف کی زیرصدارت مسلم لیگ (ن) کا مشاورتی اجلاس میں پاناما پیپرز، نیب ریفرنس، حدیبیہ ملز کیس اور پارٹی سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا اور اہم فیصلے کیے گئے.

تفصیلات کے مطابق جاتی امراء رائے ونڈ میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی زیرِ صدارت مشاورتی اجلاس ہوا، اہم اجلاس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی، اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق، وزیراعلٰی شہباز شریف، گورنر پنجاب ملک رفیق رجوانہ اور وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق سمیت دیگر رہنما شریک ہوئے.

 اجلاس میں نواز شریف کی کردار کشی کا بھرپور جواب دینے اور اداروں کے خلاف بیان بازی کو جاری رکھنے کا فیصلہ کرتے ہوئے تمام معاملات کو عوام کے سامنے لے جانے پر اتفاق ہوا تاکہ ووٹرز کو مزید متحرک کیا جائے گا اور آئندہ الیکشن کی تیاری کا بھی آغاز کردیا جائے گا جس کے لیے ڈیوژنلاور ضلعی سطح پر تنظیم سازی بھی کی جائے گی۔

اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے بتایا کہ عوامی رابطہ مہم کو تیز تر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے تحت اتوار کو ایبٹ آباد میں جلسہ عام منعقد کیا جائے گا جس سے نواز شریف خطاب کریں گے اسی طرح دیگر شہروں میں بھی جلسے منعقد کیے جائیں گے اور ضلعی سطح پر پارٹی کو متحرک کیا جائے گا.


 نواز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے لیے حکومت سے جواب طلب 


انہوں نے تحریک انصاف کے سربراہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے سوا کوئی قبل از وقت انتخابات کی بات نہیں کر رہا ہے کیوں کہ سب جانتے ہیں کہ اس سے آئینی بحران پیدا ہو گا اور ابھی تو آئینی ترمیم اور نئی حلقہ بندیوں کا کام بھی جاری ہے جس میں وقت لگے گا چنانچہ ایسی صورت حال میں فوری انتخابات کا مطالبہ احمقانہ بات کے سوا کچھ نہیں.

خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ پی پی میچور سیاست کا مظاہرہ نہیں کر رہی ہے جس کی ان سے امید نہ تھی یہاں تک کہ پیپلزپارٹی کا رویہ آئینی ترامیم پر تعاون نہ کرنے والا لگ رہا تھا تاہم کونسل آف کامن انٹرسٹ میں صورت حال کا جائزہ لے رہے ہیں اور مشاورت کے بعد ہی حکمت عملی طے کی جائے گی.

انہوں نے کہا کہ جب بھی سینیٹ کے الیکشن آتے ہیں تو کھلبلی مچ جاتی ہے اور مختلف آوازیں آنے لگتی ہیں تاہم اس بار نہ صرف یہ کہ عام انتخابات وقت پر ہوں گے بلکہ سینیٹ میں ہونے والے انتخابات بھی وقت پر ہوں گے لہذا جو لوگ قبل از وقت انتخابات کے خواب دیکھ ریے ہیں انہیں شدید مایوسی ہوگی اور آئندہ الیکشن میں بھی ان کے ہاتھ کچھ نہیں آنے والا ہے.


 شریف خاندان کی اتفاق ٹیکسٹائل ملز نیلام کرنے کا حکم


ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سب جانتے ہیں نواز شریف کو کیوں نکالا گیا کیوں کہ وہ ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کر رہے تھے اور اندھیروں کو ختم کررہے تھے، صنعتوں کو فروغ دے رہے تھے، سڑکوں کا جال بچھا رہے تھے اور طالب علموں کی حوصلہ کر رہے تھے.

خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ سیاست میں ہر پارٹی دوسرے سے رابطے میں ہوتی ہے اس لیے اگر کوئی یہ کہتا ہے کہ وہ بات نہیں کرتا تو جھوٹ بولتا ہے تاہم مصطفی کمال اور فاروق ستار نے جو باتیں کی ہیں وہ بڑی سنجیدہ ہیں جس پر تحقیقات ہونی چاہیئے.


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top