بہترین آم کے لیے مینگو ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کا مشترکہ پروجیکٹ mango research
The news is by your side.

Advertisement

بہترین آم کے لیے نیسلے اور ملتان مینگو ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کا مشترکہ پروجیکٹ

کراچی: نیسلے پاکستان نے آم کی پیداوار میں اضافے اور معیار کو بہتر بنانے کے لیے کسانوں کی مدد کے لیے ملتان مینگو ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے ساتھ مشترکہ پروجیکٹ پر کام شروع کردیا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان میں پیدا ہونے والے آم اپنے ذائقے اور معیار کی وجہ سے دنیا بھر میں بہت زیادہ پسند کیے جاتے ہیں، پاکستان میں آموں کی فصل میں بہتری اور ان کی مزید اچھی اقسام لانے کے لیے نیسلے پاکستان کی جانب سے مینگو ریسرچ انسٹی ٹیوٹ ملتان کے ساتھ مشترکہ تحقیق کا عمل شروع کیا ہے اور اب تک آم کی مخلتف اعلی اقسام متعارف کرائی گئی ہیں۔

کاشت کاروں کا کہنا ہے کہ نئی تحقیق پر عمل کرنے سے فصل اور آمدنی میں بھی اضافہ ہوا ہے، پاکستانی آم کی اپنی ایک منفرد غذائیت اور لذت ہے جس سے اس کی مانگ دنیا بھر میں پائی جاتی ہے، نیسلے پاکستان ملک میں آموں کی مختلف نئی اقسام پر تحقیق کے ساتھ جدید سائنسی طریقوں کی ذریعے آم کی پیدوار میں اضافے کے لیے کام کررہی ہے، اس سلسلے میں تین سال قبل چونسہ پائلٹ پروجیکٹ کا آغاز کیا گیا۔

پروجیکٹ مینیجر علی اشعر سید نے بتایا کہ چونسہ پروجیکٹ کا مقصد کسانوں کو ماڈرن فارمنگ کے طریقوں سے آگا ہ کرناہے، پہلے مرحلے میں 8 مینگو فارمز پر کام شروع کیا گیا ہے۔

آم ریسر چ انسٹی ٹیوٹ ملتان کے ڈائریکٹر ڈاکٹر عبدالحمید نے بتایا کہ انسٹی ٹیوٹ نیسلے پاکستان کے ساتھ مل کر آم کی بہتر کوالٹی، اضافی پیداوار اور نئی اقسام کے لیے کام کررہا ہے اور اب پاکستان میں چونسہ آم کی پیداوارا آم کی کل پیداوار کا 72 فیصد ہے۔

مقامی فارمر ملک حاجی اللہ بخش کا کہنا تھا کہ نیسلے پاکستان کی آگاہی مہم کے ذریعے آم کی پیداوار میں اضافہ کے ساتھ آمدنی بھی بڑھی ہے،پاکستان آم کی پیداوار میں چھٹا بڑا ملک ہے 4لاکھ 20 ہزار ایکڑ رقبہ پر آم کے باغات ہیں جس سے سالانہ 16 لاکھ 99 ہزار میٹرک ٹن آم کی پیداوار حاصل ہوتی ہے، جدیدتحقیق سے آم کی پیداوار بڑھا کر ملکی برآمدات میں نمایاں اضافہ کیا جا سکتا ہے جس سے قیمتی زرمبادلہ کا حصول بھی ممکن ہو گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں