یواےای کی مساجد میں بغیر اجازت مذہبی تقریبات کا انعقاد غیر قانونی قرار new-law-bans-unauthorised-religious-activities-in-uae-mosques
The news is by your side.

Advertisement

یواےای کی مساجد میں بغیر اجازت مذہبی تقریبات کا انعقاد غیر قانونی قرار

ابو ظہبی : ماہ رمضان کے آغاز میں متحدہ عرب امارات کے حکام نے ملک بھر کی مساجد اور عبادت گاہوں میں حکومتی اجازت نامے کے بغیر مذہبی تقریبات کا انعقاد کرنا غیر قانونی ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کی حکومت نے ماہ رمضان کا آغاز ہوتے ہی تمام مساجد اور عبادت گاہوں میں مذہبی پروگرامات منعقد کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ متحدہ عرب امارات کے نئے قانون کے مطابق کوئی بھی مسجد میں بغیر اجازت کسی قسم کا درس اور سیمینار منعقد نہیں کروا سکتا۔

غیرملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ یو اے ای کے نئے قوانین میں واضح کردیا گیا ہے کہ مسجد کے اندر حفظ قرآن، چندہ جمع کرنا، کسی بھی شخص کو مسجد مذہبی یا سماجی پروگرامات منعقد کرنے کے لیے تعینات کرنا، کتابچے، ہینڈ بلز، ویڈیو یا آڈیو پیغامات تقسیم کرنے پر پابندی ہوگی۔

متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ زید النہیان کی جانب سے مذکورہ قوانین جاری ہوئے جو ملک کی ہر مسجد اور عید گاہوں میں نافذ ہوگا۔

عرب میڈیا کا کہنا تھا کہ مذکورہ قانون مسجد کے ملازمین کو مساجد کے باہر حفظ قرآن، مذہبی تبلیغات اور ترویج سے بھی روکتا ہے اور ایسے ادارے حکومت سے اجازت لیے بغیر کسی بھی میڈیا سرگرمیوں میں حصّہ نہیں لے سکتے، یہاں تک کہ کسی تیسری جماعت کے لیے چندہ جمع کرنے پر بھی پابندہ ہے۔

عرب میڈیا کا کہنا تھا کہ غیر قانونی گروپ جن کا تعلق سیاسی جماعت سے ہو یا کسی دیگر جماعت کی سرگرمیوں میں ملوث ہوں، ان کا مساجد میں کام کرنا ممنوع ہوگا۔

متحدہ عرب امارات کے حکام کا کہنا ہے کہ مساجد میں ان افراد کو ملازمت دی جائے جو یو اے ای اچھی شہری ہوں اور ماضی میں کسی جرم میں ملوث نہ پائے گئے ہوں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں