The news is by your side.

Advertisement

ملیریا کی دوا کے بعد عام بیماری میں استعمال ہونے والی دوا سے کورونا کا علاج

نیویارک : امریکی ریاست نیویارک کے ڈاکٹروں نے معدے کی تیزابیت اور دل کے عارضے کی ادویات سے کورونا کے مریضوں کا علاج کرنے کے منصوبے پر کام شروع کردیا۔

تفصیلات کے مطابق نیویارک کے ڈاکٹر کیون ٹریسی نے وہان سے حاصل شدہ ڈیٹا کے ذریعے معدے کی تیزابیت اور دل کے عارضے کی ادویات کے ساتھ کورونا وائرس کے مریضوں کے اعلاج کے منصوبے پر کام شروع کیا ہے، جس کے لئے تجربے کے لئےدو سو مریض رضاکارانہ طور پر تیار کیا ہیں۔

نیویارک شہر کے نارتھ ویل اسپتال نیٹ ورک کے فائنسٹین انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل ریسرچ سینٹر میں رضاکاروں کو معدے کی تیزابیت اور دل کے عارضے میں استعمال ہونے والی عام دوائی فیموٹی ڈائن کے ڈوز دینا شروع کردئیے ہیں۔

محققین یہ جاننے کی کوشش کر رہے ہیں کہ آیا فیموٹی ڈائن کوویڈ 19 کو روکنے میں مدد دیتی ہے ، جس طرح کچھ ادویات ایچ آئی وی / ایڈز کو روکتی ہیں۔

ڈاکٹر کیون ٹریسی کا کہنا ہے کہ انہیں اپنے تجربے کے درست نتائج کے لئے کم سے کم تین سو مریض درکار ہیں، اگر دوائی کی آزمائش کے مثبت نتائج سامنے آتے ہیں تو یہ اب تک کورونا کے حوالے سے سب سے بہتر، سستا اور جلد ہونے والا علاج ہوگا۔

امریکی ماہرین کی جانب سے کورونا کے مریضوں کو ملیریا سے بچاؤ کی دوا کلوروکوئن کے ساتھ ہی معدے کی تیزابیت اور دل کے عارضے کی دوائی دی جا رہی ہے اور آئندہ چند ہفتوں میں نتائج سامنے آنے کا امکان ہے۔

خیال رہے مختلف ممالک میں دوائیوں کو کورونا کے مریضوں پر آزما کر یہ دیکھنے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ کون سی دوائیاں وبا کو روک سکتی ہیں۔ کورونا وائرس کے مریضوں کے علاج کے لیے ملیریا کی دوا کلوروکوئن سمیت بلڈ پلازما جیسے طریقے کو بھی آزمایا جا رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں