The news is by your side.

Advertisement

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کا آٹومیٹک اورسیمی آٹومیٹک اسلحے پرپابندی کا اعلان

ویلنگٹن: نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا ایرڈن کا کہنا ہے کہ نیوزی لینڈ کے شہریوں سے خود کار ہتھیارواپس لیے جائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے پریس کانفرنس کے دوران آٹومیٹک اورسیمی آٹومیٹک اسلحے پرپابندی کا اعلان کرتے ہوئے بتایا کہ مساجد پر حملے میں آٹومیٹک اور سیمی آٹو میٹک اسلحہ استعمال کیا گیا۔

جیسنڈا ایرڈن نے کہا کہ اسلحے پرپابندی سے متعلق قانون سازی جلد کی جائے گی، آئندہ ہفتے کابینہ اسلحہ کی رجسٹریشن کے قواعد پرغورکرے گی۔

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا ایرڈن نے کہا کہ شہری ممنوعہ اسلحہ سے متعلق پولیس سے رابطہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ کے شہریوں سے خود کارہتھیارواپس لیے جائیں گے، گن ریفارمز عوام کے مفاد میں ہے۔

سفید فام قوم پرستی پوری دنیا کا مسئلہ ہے‘ جیسنڈا ایرڈن

خیال رہے کہ گزشتہ روز برطانوی خبر رساں ادارے کوانٹرویو دیتے ہوئے نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سفید فام قوم پرستی پوری دنیا کا مسئلہ ہے۔

نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کا شہدائے کرائسٹ چرچ کوزبردست خراج عقیدت

اس سے قبل 19 مارچ کو سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس ہوا تھا جس میں وزیراعظم جیسنڈا ایرڈن نے حملہ آور کو دہشت گرد، مجرم اور انتہا پسند قرار دیا تھا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ حملہ آور دہشت گردی کے اپنے عمل سے بہت کچھ چاہتا تھا جس میں ایک چیز شہرت بھی ہے، اسی وجہ سے اس کا نام میں کہیں نہیں لوں گی۔

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا ایرڈن نے اجلاس کے دوران شہید پاکستانی نعیم راشد کو خراج عقیدت پیش کیا تھا۔

نیوزی لینڈ کی 2 مساجد میں فائرنگ‘ 49 افراد جاں بحق

یاد رہے کہ 15 مارچ کو نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں دہشت گرد حملے کیے گئے جس کے نتیجے میں خواتین وبچوں سمیت 49 افراد جاں بحق اور 20 زخمی ہوئے تھے۔

مرکزی حملہ آور کی شناخت 28 سالہ برینٹن ٹیرنٹ کے نام سے ہوئی ہے اور وہ آسٹریلوی شہری ہے جس کی تصدیق آسٹریلوی حکومت نے کردی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں