پشاور: زرعی ڈائریکٹوریٹ پردہشت گرد حملہ -
The news is by your side.

Advertisement

پشاور: زرعی ڈائریکٹوریٹ پردہشت گرد حملہ

پشاور: صوبہ خیبرپختونخواہ کے دارالحکومت پشاور میں زرعی ڈائریکٹوریٹ پردہشت گردوں کے حملے میں 9 افراد شہید، 35 زخمی ہوگئے جبکہ تینوں دہشت گردوں کو ہلاک کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق پشاور میں زرعی ڈائریکٹوریٹ پردہشت گردوں کے حملے کے نتیجے میں 9 افراد شہید جبکہ 35 افراد زخمی ہوگئے، سیکورٹی فورسز کی کارروائی میں تمام دہشت گرد مارے گئے۔

حملے میں ہلاک ہونے والے دہشت گردوں کے پاس سے 3 خودکش جیکٹس، 8 دستی بم، 2 آئی ای ڈیزبم، متعدد کلاشنکوف کے علاوہ دیگر دہشت گردی کا سامان برآمد کیا گیا۔


آئی ایس پی آر


پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق دہشت گردوں نے زرعی یونیورسٹی ڈائریکٹوریٹ پرحملہ کیا، پاک فوج کے جوان فوراً موقع پرپہنچے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق ذرعی ڈائریکٹوریٹ پر حملہ کرنے والے تمام دہشت گرد مارے گئے جبکہ آپریشن میں 2 جوان زخمی ہوئے جنہیں سی ایم ایچ اسپتال پشاور منتقل کردیا گیا ہے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق ذرعی ڈائریکٹوریٹ میں کلیئرنس آپریشن بھی مکمل کرلیا گیا۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ ہاسٹل سے 8 طلبہ کو بحفاظت نکال لیا گیا جبکہ علاقے کی فضائی نگرانی بھی کی گئی۔

دوسری جانب واقعے کے زخمیوں کو طبی امداد کے لیے خیبرٹیچنگ اسپتال منتقل کردیا گیا اور اسپتال میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

اسپتال انتظامیہ کے مطابق واقعے میں 9 افراد شہید، 35 زخمی ہیں جنہیں اسپتال منتقل کیا گیا جبکہ حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں 6 اور خیبرٹیچنگ اسپتال میں3 لاشیں لائی گئیں۔

ترجمان خیبرٹیچنگ اسپتال کا کہنا ہے کہ زخمیوں میں 10 طالب علم، چوکیدار، صحافی اور ایس ایچ او سمیت 35 افراد زخمی ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق زرعی ڈائریکٹوریٹ میں 3 نقاب پوش مسلح افراد نے حملہ کرکے فائرنگ شروع کردی۔

واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور سیکورٹی فورسز جائے وقوعہ پر پہنچیں جبکہ یونیورسٹی روڈ کو ٹریفک کے لیے بند کردیا گیا۔

آئی جی خیبرپختونخواہ صلاح الدین محسود نے اے آروائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ حملہ آوروں کی تعداد 3 ہے جبکہ حملہ آوربر قعہ پہن کررکشے میں آئے۔


پشاوردھماکےمیں ایڈیشنل آئی جی اشرف نوراورگن مین شہید


یاد رہے کہ 24 نومبر کو پشاور کےعلاقے حیات آباد میں پولیس کی گاڑی کے قریب دھماکے کے نتیجے میں ایڈیشنل آئی جی اشرف نور اور ان کے محافظ شہید جبکہ 6 اہلکار زخمی ہوگئے تھے۔


اگرآپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اوراگرآپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پرشیئرکریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں