The news is by your side.

Advertisement

عدالت نے نشوہ کیس کا فیصلہ سنا دیا

کراچی: شہر قائد کی مقامی عدالت نے نشوہ کیس کا محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے اسپتال سے انجیکشن کی پرچی طلب کرلی۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے سٹی کورٹ میں نشوہ کیس کی سماعت ہوئی جس میں پولیس نے ملزمان کو پیش کیا۔ عدالت نے حراست میں لیے گئے ملزمان کو 28 اپریل تک ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کیا۔ جج نے پہلے سے محفوظ فیصلہ سنایا اور نشوہ کو لگائے جانے والے انجیکشن سمیت اسپتال میں بچوں کے آئی سی یو کی موجودگی کی تفصیلات بھی طلب کرلیں۔

مزید پڑھیں: نشوا کی پوسٹ مارٹم رپورٹ 2 ہفتوں میں جاری ہوگی: پولیس سرجن

دوسری جانب مدعی کے وکیل نے عدالت میں مؤقف اختیار کیا کہ ’نشوہ کا کیس قتلِ خطا نہیں بلکہ اُسے جان بوجھ کر مارا گیا‘۔ مقدمے میں غفلت اور لاپرواہی کی دفعہ 322 کا اضافہ بھی کردیا گیا۔ عدالت نے تفتیشی افسر کو اسپتال عملے کی تعلیمی قابلیت اور دیگر کوائف بھی جمع کرنے کی ہدایت کی۔

دریں اثناء پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن نے نشوہ کی موت کو قتل قرار دیا۔ پریس کانفرنس میں ڈاکٹر قیصر سجاد کا کہنا تھا کہ 9 ماہ کی بچی کو غلط انجیکشن لگایا گیا میری نظر میں یہ قتل ہے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ کیس کی شفافانہ تحقیقات کر کے اسے منطقی انجام تک پہنچایا جائے تاکہ مسقبل میں عوام ایسے واقعات سے محفوظ رکھا جاسکے، ایک شخص کی کوتاہی پر ادارہ بندکرنا کوئی حل نہیں، ہمیں طبی شعبےکی مکمل جانچ پڑتال کرنا ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں: مطالبات نہ مانے توکل سےشہریوں کے ساتھ دھرنا دوں گا، والد نشوہ

یاد رہے کہ نشوہ کے والد قیصر علی نے مطالبہ کیا ہے کہ واقعے کی جوڈیشل انکوائری کرائی جائے اور دارالصحت اسپتال کی انتظامیہ کو بھی حراست میں لیا جائے، انہوں نے عندیہ دیا کہ اگر مطالبات منظور نہ ہوئے تو جلد دھرنے پر بیٹھ جاؤں گا۔ یہ بھی یاد رہے کہ وزیر اعلیٰ سندھ کی ہدایت پر گزشتہ روز ہیلتھ کمیشن نے کارروائی کرکے دارالصحت اسپتال کی او پی ڈی کو سیل کردیا تھا۔

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں