The news is by your side.

Advertisement

مینار پاکستان میں لڑکی سے بدتمیزی کا واقعہ ، تاحال کوئی ملزم گرفتار نہ ہوسکا

لاہور : پولیس مینار پاکستان میں لڑکی سے بدتمیزی کے واقعے میں ملوث کسی بھی ملزم کو تاحال گرفتار نہ کرسکی، ڈی آئی جی انوسٹی گیشن کا کہنا ہے کہ سی سی ٹی وی ،سوشل میڈیاویڈیوسے شناخت کر رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق مینار پاکستان میں لڑکی سےبدتمیزی کے واقعے میں تاحال کوئی ملزم گرفتار نہ ہوسکا ، خاتون سے 400کے قریب افراد نے ہلڑ بازی کرکے بدتمیزی کی تھی، خاتون عائشہ کی مدعیت میں پولیس نے مقدمہ درج کررکھا ہے۔

ڈی آئی جی انوسٹی گیشن کا کہنا ہے کہ سی سی ٹی وی ،سوشل میڈیاویڈیوسے شناخت کر رہے ہیں، بہت جلدملزمان تک پہنچ جائیں گے۔

دوسری جانب وفاقی وزیرشیریں مزاری نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر گریٹر اقبال پارک واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے کہا وزارت انسانی حقوق پنجاب حکومت سے رابطے میں ہے، پنجاب حکومت معاملے پر سخت کارروائی کویقینی بنائےگی ، واقعے سےمتعلق ایف آئی آر درج ہوگئی ہے، ہمیں لوگوں میں پرتشددرویہ تبدیل کرنےکی ضرورت ہے۔

شیریں مزاری کا کہنا تھا کہ ہمارےپاس پرتشدد رویہ سدھارنےکےلیےقوانین اورپروگرام موجودہیں، یقیناًقوانین کےنفاذسےپرتشددرویےمیں کچھ کمی آئےگی، سوچ بدل کرہی ہم معاشرے کے کمزور افراد کےخلاف جرائم روک سکتےہیں ، قوانین کےنفاذکےساتھ سوچ بدلنےکی ضرورت پربھی ہماری توجہ ہے۔

یاد رہے لاہور گریٹر اقبال پارک میں 14 اگست کے روز ویڈیو بنانے آنے والی ٹک ٹاکر عائشہ اکرام کو ہجوم نے ہراساں کیا تھا، واقعے میں ملوث 400 نامعلوم افراد کیخلاف مقدمہ درج کیا گیا ، جس میں متاثرہ خاتون نے درخواست میں موقف اپنایا تھا کہ ان پر تشدد کیا گیا، موبائل فون اور نقدی بھی چھین لی گئی۔

ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے واقعے نوٹس لیا اور سی سی پی او سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے کارروائی کا حکم دیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں