The news is by your side.

Advertisement

برطانوی وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد؟

برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن کے لیے ‘پارٹی گیٹ اسکینڈل’ گلے کی ہڈی بن گئی جو کہ ان کے اقتدار کے لیے خطرے کی علامت بن گئی۔

اسکینڈل میں پھنسے بورس جانسن کے خلاف عدم اعتماد لانے کی تیاریاں ہونے لگیں۔ اپوزیشن کے ساتھ ساتھ حکمران پارٹی کے اراکین بھی وزیراعظم کو ہٹانے کے لیے یک زبان ہونے لگے۔

حکمران جماعت کنزرویٹو پارٹی سے تعلق رکھنے والے بعض اراکین نے بورس جانسن کے اختیارار پر سوالات اٹھائے ہیں اور ان کے خلاف عدم اعتماد کی تیاری شروع کر دی ہے۔

بورس جانسن کے اتحادی رہنے والے سابق جونیر وزیر جیسی نارمن نے وزیراعظم کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ بورس جانسن کے منصب پر رہنے سے پارٹی اور ووٹرز کی توہین ہورہی ہے۔

بورس جانسن کے خلاف انتخاب لڑنے والے سابق وزیرصحت جرمی ہنٹ کا کہنا ہے میں تبدیلی کو ووٹ دوں گا، پارٹی جانتی ہے کہ وہ ملک کو تباہی کی طرف لے جارہی ہے اس مقام پر بڑا فیصلہ کرنا ہو گا۔

عدم اعتماد کو کامیاب بنانے کے لیے کنزرویٹو قانون سازوں کی اکثریت یا پھر 180 اراکین کو بورس جانس کے خلاف ووٹ دینا ہو گا جس پر پارٹی ارکان سمجھتے ہیں اس تعداد تک پہنچنا مشکل ہوگا۔

برطانوی وزیراعظم پر الزام ہے کہ انہوں نے کرونا پابندیوں کے باوجود جون دوہزار بیس میں سرکاری رہائش گاہ میں 30 مہمانوں کے ساتھ اپنی سالگرہ منائی، یہی نہیں بلکہ مئی دوہزار بیس میں ٹین ڈاؤننگ اسٹریٹ کے لائن میں ایک پارٹی کا انعقاد کیا جس میں سو افراد شریک ہوئے تھے، یہ وہ وقت تھا جب برطانیہ میں عالمی وبا اپنے عروج پر تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں