The news is by your side.

Advertisement

کسی شخص کو محض مقدمے میں نامزد ہونے پر گرفتار نہیں کیا جاسکتا، سپریم کورٹ کا حکمنامہ جاری

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے تحریری حکم نامے میں کہا ہے کہ کسی کو محض نامزد ہونے پر گرفتار نہیں کیا جاسکتا، گرفتاری سے قبل ٹھوس وجوہات ضروری ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ نے گرفتاری کے حوالے سے تفصیلی فیصلہ جاری کردیا ، جسٹس منصورعلی شاہ نے تفصیلی فیصلہ تحریرکیا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ کسی کومحض مقدمےمیں نامزدہونےپرگرفتارنہیں کیا جاسکتا، کسی شخص کی گرفتاری سے قبل ٹھوس وجوہات ہوناضروری ہیں۔

تفصیلی فیصلے میں کہا ہے کہ پولیس کو قابل تعزیرجرم پرکسی شخص کوگرفتارکرنےکااختیارہے، پولیس کے پاس کسی شخص کی گرفتاری پر معقول وضاحت ہونی چاہیے۔

فیصلے کے مطابق پولیس کوہرشخص کی گرفتاری کاصوابدیدی اختیارنہیں، پولیس گرفتاری کا اختیار رکھنے پر ہر نامزد ملزم کو گرفتارنہیں کرسکتی۔

تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ عدالتیں گرفتاری سےقبل ضمانت درخواست پرفیصلےکیلئےشفاف ٹرائل مدنظر رکھیں، گرفتاری سےقبل ضمانت کاعدالتی اختیارپولیس پرچیک کی حیثیت رکھتاہے، پولیس کی بدنیتی، بے قصور ہونے پر نامزد شخص قبل ازگرفتاری ضمانت کا حقدار ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں