The news is by your side.

Advertisement

سندھ اسمبلی میں دوسرے روز بھی شورشرابہ اورنعرے بازی، پی ٹی آئی کا واک آؤٹ

کراچی: سندھ اسمبلی میں دوسرے روز بھی شورشرابہ اورنعرے بازی جاری رہی، ایوان بدستور مچھلی بازار بنا رہا، اپوزیشن نے احتجاج کرتے ہوئے ایوان سے واک آؤٹ کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق دوسرے روز بھی سندھ اسمبلی مچھلی بازار بنا رہا، ارکان نے اتنا شور شرابہ کیا کہ کان پڑی آواز سنائی نہیں دی، اپوزیشن نے ایوان سے واک آؤٹ بھی کیا۔

شراب کو انگلی سے چیک کرنے کی تکنیک دنیا میں کہیں نہیں، دنیا حیران ہے: عدیل شہزاد

سابق ڈپٹی اسپیکر سندھ اسمبلی شہلا رضا نے وفاقی حکومت پر تیر اندازی کرتے ہوئے کہا کہ قرض کو لعنت سمجھنے والوں نے ورلڈ بینک سے کتنی لعنت سمیٹی۔

پی پی رہنما شہلا رضا کی تقریر پر اپوزیشن نے احتجاج کرتے ہوئے واک آؤٹ کیا، انھوں نے کہا کہ حکومت نے ایک ماہ میں سولہ قلابازیاں کھائیں۔

قبل ازیں ارباب لطف اللہ کے ریمارکس پر پی ٹی آئی کے اراکین نے احتجاج کیا۔ ارباب لطف اللہ نے کہا کہ سندھ کا کتا، کتا ہے جب کہ پنجاب کا کتا شیرو ہے۔

رکن اسمبلی عدیل شہزاد نے کہا کہ شراب کو انگلی سے چیک کرنے کی تکنیک دنیا میں کہیں نہیں، دنیا حیران ہے کہ سندھ لیبارٹری میں یہ فارمولہ کہاں سے آ گیا۔


یہ بھی پڑھیں:  سندھ اسمبلی کا بجٹ اجلاس ہنگامے کی نذر، حکومتی اور اپوزیشن ارکان کا شور شرابا


فنکشنل لیگ کی نصرت سحر عباسی نے پیپلز پارٹی پر تیکھے وار کیے، کہا سندھ بجٹ کے کروڑوں روپے لانچوں میں دبئی جاتے ہیں۔ ہاجمولہ کی گولیوں کی بہ جائے ہم پیٹ میں درد کی دعا دیں گے۔

گیارہ سال میں چودہ سو ارب روپے لندن اور دبئی کے محلات چلے گئے، لوگ پوچھتے ہیں سندھ کا کون سا شہر ہے جہاں ایک مخصوص خاتون کا گھرنہیں۔

اسمبلی میں اعتراف کیا گیا کہ پیپلز پارٹی ووٹ خریدتی ہے، چیف جسٹس نوٹس لیں۔ نصرت سحر عباسی جیسے ہی چپ ہوئیں سندھ اسمبلی میں پیپلز پارٹی نے شور شرابہ اور احتجاج شروع کر دیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں