The news is by your side.

Advertisement

امریکی صدر بارک اوبامہ نے ملا اختر منصور کی ڈرون حملے میں ہلاکت کی تصدیق کردی

ہنوئی : ویت نام کے دورے پر آئے امریکی صدر نے “افغان طالبان “کے امیر ملا اختر منصورکی ڈرون حملے میں ہلاکت کی تصدیق کردی ہے۔

تفصیلات کے مطابق امریکی صدر بارک اوبامہ نے اپنے ایک بیان میں امیرِ طالبان ملا اختر منصورکی ڈرون حملوں میں ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے اُس تنظیم کے سربراہ کو مارا ہے جو افغانستان میں صرف امریکی اور اس کی اتحادی فوجوں کو ہی نشانہ نہیں بنارہی ہے بلکہ افغانستان کے معصوم شہری بھی ان دہشت گردوں سے محفوظ نہیں۔


افغان انٹلی جنس نے طالبان رہنما ملا منصور کی ہلاکت کی تصدیق کردی


ویت نام کے دورے پر آئے ہوئے امریکی صدر بارک اوبامہ نے ملا اختر منصورکی ہلاکت کی وجوہات بیان کرتےہوئے بتایا کہ ملا منصور نے امن مزاکرات کو مسترد کرکے دہشت گرد کاروائیاں جاری رکھتے ہوئے افغانستان کے معصوم بچوں اور خواتین تک کی جانیں لیں۔

اس موقع پر امریکی صدر نے طالبان کی باقی ماندہ قیادت کو امن مزاکرات جاری رکھنے کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ مزاکرات ہی ہر تنازعے کے حل کا واحد اور حقیقی راستہ ہے۔

یاد رہے ملا عمر کی ہلاکت کے بعد طالبان کے نئے امیر کے لیے ملا اختر منصورکا انتخاب ہوا تھا، امیر کے چناؤ کے لیے ان کو کافی جدوجہد کرنا پڑی تھی،جب کہ امیر کے چناؤ میں اختلاف رکھنے والے کچھ رہنماؤں کو اپنی جان سے ہاتھ بھی دھونا پڑا تھا۔


طالبان نے ملا اختر منصور کو اپنا نیا امیر منتخب کر لیا


امریکی صدر بارک اوبامہ نے اس بات کا اعادہ کیا کہ پاکستان کو دہشت گردوں کے لیے محفوظ پناہ گاہ نہیں بننے دیں گے،امریکہ پاکستان کے ساتھ معلومات کے باہمی تبادلےکے ساتھ پاکستانی سرزمین پر موجود دہشت گردوں کا پیچھا کرتے رہیں گے۔

دوسری جانب لندن میں موجود وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف نے پاکستان کی سرزمین پر ڈرون حملوں کو ملکی سالمیت اور خود مختاری کی خلاف ورزی قرار دیا ہے،وزارتِ خارجہ نے پاکستان نے شدید احتجاج کرتے ہوئے وضاحت کی کہ ڈرون حملے کی پیشگی اطلاع نہیں دی گئی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں