site
stats
عالمی خبریں

اوباما کا جیلوں میں معمولی جرائم میں ملوث قیدیوں کی سزائیں ختم کرنے کا اعلان

واشنگٹن : صدر براک اوباما کی جانب سے امریکی جیلوں میں منشیات کے معمولی جرائم میں ملوث قیدیوں کی سزائیں ختم کرنے کے اعلان کے بعد ہزاروں قیدیوں کی رہائی کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے.

صدر اوباما کے اعلان کے بعد خصوصی اقدامات کے تحت امریکا بھر کی جیلوں میں منشیات کے معمولی جرائم میں ملوث چھ ہزار سے زائد قیدیوں کی رہائی کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ ان قیدیوں میں بڑی تعداد امریکا میں غیر قانونی طریقے سے رہنے والے تارکین وطن کی ہیں. جنہیں ان کے آبائی ممالک میں ڈی پورٹ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

امریکی صدر براک اوباما کے خصوصی اقدامات کریمینل جسٹس ریفارم پر تنقید بھی ہورہی ہے اور تعریف بھی.

ماہرین کے خیال میں یہ قیدی وقت سے پہلے رہا ہوکر دوبارہ غیر قانونی سرگرمیوں میں ملوث ہوکر امن و امان کا مسئلہ پیدا کر سکتے ہیں جبکہ ان سزا یافتہ قیدیوں کو مجرمانہ ریکارڈ کی وجہ سے نوکریاں حاصل کرنے میں بھی مشکلات پیش آسکتی ہیں تاہم ان ان سب خدشات کے باوجود رہائی پانے والے افراد بہت خوش ہیں۔

اعداد و شمار کے مطابق ان قیدیوں میں سے 1764 قیدیوں کو مختلف ممالک میں ڈی پورٹ کیا جارہا ہے جبکہ 4348 کی ابتدائی طور پر سخت نگرانی کی جائے گی ، صدر اوباما کے اس فیصلے کا ایک بڑا مقصد امریکی جیلوں میں گنجائش سے زیادہ قیدی موجود ہونا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top