The news is by your side.

Advertisement

کشمیر میں ماورائے عدالت قتل اور لاپتہ افراد کی تحقیقات کی جائیں، او آئی سی

جدہ : یوم استحصال کشمیر کے موقع پر او آئی سی نے مظلوم کشمیری عوام سے اظہار یکجہتی کیلئے بھارتی فوج کے مظالم کی مذمت کرتے ہوئے مقبوضہ وادی میں انسانی حقوق کی بحالی کا مطالبہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق مسلم ممالک کی عالمی تنظیم او آئی سی(آرگنازیشن آف اسلامک کنٹریز) کے انسانی حقوق کمیشن نے کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔

اس حوالے سے ترجمان او آئی سی کا کہنا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خطرناک صورتحال پر فوری کارروائی کی جائے، کشمیر میں نہتےاور بے گناہ عوام کے ماورائے عدالت قتل اور جبری لاپتہ کرنے کی تحقیقات کی جائیں۔

ترجمان کا مزید کہنا ہے کہ مقبوضہ وادی میں تشدد، غیرقانونی قیدو نظربند کی تحقیقات کرائی جائیں، مقبوضہ کشمیرمیں5اگست2019سے اب تک صورتحال مسلسل خراب ہورہی ہے۔

مزید پڑھیں : او آئی سی نے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کا نیا ڈومیسائل قانون مسترد کر دیا

یاد رہے کہ 5 اگست 2019 کو بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے بعد جموں وکشمیر میں سول سروسز ایکٹ لاگو کیا گیا ہے جس کے مطابق جو جموں وکشمیر میں 15 سال سے مقیم ہے وہ اپنے ڈومیسائل میں مقبوضہ علاقے کو اپنا آبائی علاقہ قرار دے سکیں گے۔

ایکٹ میں واضح کیا گیا کہ ڈومیسائل میں مقبوضہ علاقے کو اپنا آبائی علاقہ قرار دینے والے شخص کے لیے ضروری ہے کہ اس نے جموں و کشمیر کے وسطی علاقے میں 15 سال تک رہائش اختیار کی ہو یا 7 سال کی مدت تک تعلیم حاصل کی ہو یا علاقے میں واقع تعلیمی ادارے میں کلاس 10 یا 12 میں حاضر ہوا ہو اور امتحان دیے ہوں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں