The news is by your side.

Advertisement

مشہور حویلیاں‌ جو خستہ حال اور مخدوش حالت میں ہیں

ہندوستان میں جہاں‌ شان دار محلّات اور قلعے عہدِ کہنہ کی یادگار ہیں‌، وہیں صدیوں قبل تعمیر کی گئیں امرا اور رؤسا کی حویلیاں بھی دیدنی ہیں۔ اگرچہ آج ان کی چمک دمک ماند پڑچکی ہے اور ان میں‌ سے بیش تر خستہ حال اور مخدوش ہیں، لیکن ان کے در و دیوار شان و شوکت اور اپنے زمانے کی کہانی ضرور سناتے ہیں۔ یہاں‌ ہم قارئین کی دل چسپی کے لیے لاہور کی ایسی ہی چند حویلیوں کا تذکرہ کررہے ہیں۔

مبارک حویلی کو تین بھائیوں میر بہادر علی، میر نادر علی اور میر بابر علی نے تعمیر کروایا تھا۔ سکھ عہد کے آخری سالوں میں سردار کہر سنگھ سندھانوالیہ کے زیرِ تصرف آگئی۔ اس دوران اس کی عمارت میں بے شمار تغیر و تبدل کیا گیا۔ مشرق کی طرف بڑا دروازہ نکالا گیا۔ بڑے بڑے دالان، صحن و عمارات جدید طرز پر بنوائی گئیں۔

وزیر خان نے شاہ عالمی دروازے کے اندر پری محل کے نام سے ایک حویلی تعمیر کروائی۔ اس کے دو درجے تھے۔ ایک زنانہ دوسرا مردانہ۔ سکھ عہد کے اوّلین دور میں پہلے تو تین سکھ سرداروں نے اس کے پتھر نکلوائے اور فروخت کیے۔ جب مہاراجہ رنجیت سنگھ کا دور آیا تو اس نے اس حویلی میں فوج اور گولہ بارود رکھا۔ اس کی بڑی بڑی عمارات گرا کر کھلا میدان بنا دیا گیا۔ انگریزی عہد میں محمد سلطان ٹھیکیدار نے اس کو خرید کر یہاں سے اینٹیں نکلوائیں اور پھر لنڈا بازار و سرائے کی عمارات تعمیر کروائیں۔

قدیم عمارات میں ایک اندھی حویلی بھی شامل ہے۔ چوں کہ اس کی مسقّف ڈیوڑھی میں بہت اندھیرا رہتا تھا، اس لیے اندھی حویلی کے نام سے مشہور ہوئی۔ شاہ جہاں کے عہد میں نواب وزیر خان کی نظامت کے وقت یہ حویلی ایک امیر ہندو نے تعمیر کروائی تھی۔ سکھ عہد کی غارت گری کے وقت اس کے وارث حویلی سے نکل گئے۔ لاہور شہر جب تین سرداروں کے قبضے میں تھا، آرائیں خاندان کے تین افراد حویلی میں متمکن ہوگئے۔

نواب زکرّیا خان کے عہد میں، میر جواد نے حویلی میر جواد دہلی دروازے میں تعمیر کروائی۔ مہاراجہ رنجیت سنگھ نے پنڈت گنگا رام کو یہ حویلی دی جو اس کا مالیاتی امور کا وزیر تھا۔

شہرِ قدیم کے وسطی حصّہ چوک رنگ محل کے نزدیک چوک ڈبی اور موتی بازار کے درمیان کابلی مَل نے اپنی حویلی تعمیر کی جو اس وقت (1763 – 67ء) لاہور کا گورنر تھا۔

رنجیت سنگھ کے عہد میں لوہاری دروازے کے اندر مہاراجہ کھڑک سنگھ نے حویلی تعمیر کی۔ اس کے ایک طرف کونے میں مسجد تھی۔ کھڑک سنگھ نے اپنی حویلی کی عمارت میں خم ڈال لیا، مگر مسجد کو نہ گرایا، جب تک زندہ رہا امام مسجد کے لیے دس روپے ماہوار مقرر کیے رکھا۔

مہاراجہ کھڑک سنگھ کے فرزند نونہال سنگھ نے موری دروازے کے قریب اپنی حویلی تعمیر کروائی جس میں بڑے بڑے دالان سہ نشین، تہ خانے اور بالا خانے بنائے گئے۔ چھتوں پر طلائی اور شیشے کا کام کروایا۔ بوقتِ تعمیر حویلی کی وسعت کے لیے رعایا کے مکانات زبردستی لے لیے گئے۔

بھاٹی دروازہ کے اندر بازارِ حکیماں میں فقیر خاندان کے تین بھائیوں سید عزیز الدین، سید نور الدین، اور سید قمر الدین نے اپنی حویلی تعمیر کی۔ اس کے کچھ حصے میں آج کل فقیر خانہ میوزیم بنا دیا گیا ہے۔

سکھ عہد کے کشمیر کے گورنر نواب امامُ الدّین خان نے لوہاری دروازے کے پاس ہی اپنی حویلی نواب امام دین تعمیر کی۔

دہلی دروازے کے اندر چوک وزیر خان کے قرب میں سکھ عہد میں حویلی راجہ ناتھ تعمیر کی گئی۔ سکھ عہد میں تعمیر کی جانے والی حویلیوں کے فنِ تعمیر کا اگر جائز ہ لیا جائے تو کئی پہلو سامنے آتے ہیں اور ان حویلیوں کے فنِ تعمیر کی بنتی بگڑتی شناخت کے خدوخال واضح ہونے لگتے ہیں۔

ڈاکٹر سیف الرحمٰن نے لکھا ہے کہ یہ حویلیاں وقوع کے اعتبار سے یا تو قلعے کے قریب ہیں یا پھر ان کی جائے تعمیر شہر پناہ کے دروازوں کے قرب میں ہے۔ سکھ عہد کی حویلیوں میں چھتوں پر نقّاشی، شیشے کا کام اور دیواروں پر تزئین و آرائش کے بہت اعلیٰ نمونے دیکھنے کو ملتے ہیں جو اپنی صنّاعیِ مہارت اور دل کشی میں اپنی مثال آپ ہیں۔

آج اتنی صدیاں گزرنے کے بعد بھی عہدِ کہنہ کی یہ یادگاریں اور عہدِ پارینہ کے یہ مٹتے ہوئے نقوش بہت دل کش اور نظر گرفتہ ہیں۔

(پاکستان کے آثارِ قدیمہ سے اقتباس)

Comments

یہ بھی پڑھیں