The news is by your side.

Advertisement

سابق اولمپیئن منصور کے دل کی کارکردگی 20 فیصد رہ گئی ہے: میڈیکل رپورٹ

کراچی: پاکستان کے قومی کھیل ہاکی کے سپر اسٹار اولمپیئن اور سابق گول کیپر منصور احمد امراضِ قلب میں مبتلا ہونے کے باعث قومی ادارہ برائے امراضِ قلب کراچی میں زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں‘ ان کے دل میں خون پمپ کرنے کی صلاحیت محض 20 فیصد رہ گئی ہے۔

تفصیالت کے مطابق این آئی سی وی ڈی کی جانب سے 22 مارچ کو مرتب کی گئی ان کی میڈیکل رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان کے دل کے ذریعے خون پمپ کرنے کا عمل محض 15 سے 20 فیصد رہ گیا ہے ‘ جو کہ خطرے کی حد میں شامل ہے۔ رپورٹ قومی ادارہ برائے امراضِ قلب کے چیئرمین پروفیسر سید زاہد جمال اور پروفیسر طارق اشرف نے مرتب کی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں ماہرین متفق ہیں کہ سابق اولپمئین کو فی الفور ہارٹ ٹرانسپلانٹ کی ضرورت ہے جو کہ پاکستان میں ممکن نہیں ہے۔

سنہ 1994 کے ہاکی ورلڈ کپ فائنل میں پینلٹی اسٹروک پر گول روک کر ہاکی ورلڈ کپ میں پاکستان کو فتح سے ہمکنار کرانے والے قومی ہیرو منصور احمد کو کچھ عرصہ قبل دل کا دورہ پڑا تھا جس کے بعد سے وہ جناح اسپتال میں زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں۔خیال رہے کہ اس سے قبل منصور احمد کا سال 2016 جون میں امراضِ قلب کا آپریشن ہوا تھا اور ان کے دل میں پیس میکر لگا یا گیا تھا۔ اس دوران انہیں مالی مشکلات کا بھی سامنا کرنا پڑے تھا تاہم وہ عارضی طور پر صحت یاب ہوگئے تھے۔

یاد رہے کہ انہوں نے 1986 سے 2000 تک قومی ہاکی ٹیم میں بحیثیت گول کیپر بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا، اس دوران منصوراحمد نے 338 عالمی میچز کھیلے۔علاوہ ازیں وہ ماضی میں ایشیاء کے نمبر ون گول کیپر بھی رہے ہیں، اولمپکس کھیلتے ہوئے انہوں نے متعدد سلور اور گولڈ میڈل بھی اپنے نام کئے۔

واضح رہے کہ گول کیپر منصور احمد نے آسٹریلیا میں 1994 کے ہاکی ورلڈ کپ کے فائنل میں ہالینڈ کے خلاف پینلٹی اسٹروک پر گول روک کر قومی ٹیم کو چوتھی بار عالمی چمپیئن بنایا تھا۔

پاکستانی کرکٹ کے معروف آل راؤنڈر اور کراچی کنگز کے صدر شاہد خان آفریدی بھی زیر علاج سابق اولمپئن کی مدد کے لیے سامنے آئے تھے ۔ بوم بوم نے اعلان کیا تھا کہ ان کے علاج کا تمام خرچہ شاہد آفریدی فاؤنڈیشن اٹھائے گی۔ تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ شاہد آفریدی فاؤنڈیشن کو تاحال سابق اولمپئین کی میڈیکل سمری موصول نہیں ہوئی ہے جس کے سبب اس معاملے میں فی الحال کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے۔ شاہد آفریدی فاؤنڈیشن سے تعلق رکھنے والے ذرائع نے یہ بھی کہا کہ جیسے ہی سمری موصول ہوگی اس پر ترجیحی بنیادوں پر کام کیا جائے گا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں