The news is by your side.

Advertisement

عمر رزاز اردن کے نئے وزیر اعظم نامزد

عمان: اردن میں حکومت مخالف مظاہرے کی وجہ سے مستعفی ہونے والے سابق وزیر اعظم ’حانی الملکی‘ کے بعد عمر رزاز کو نیا وزیر اعظم نامزد کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق اردن کے بااختیار بادشاہ ’عبداللہ‘ کی جانب سے عمر رزاز کو نئے وزیر اعظم کے لیے نامزد کیا گیا ہے، عمر رزاز ہارورڈ یونیورسٹی سے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور ورلڈ بینک کے سابق سینیئر افسر ہیں۔

عمر رزاز نے برطانیہ کے میساچوسٹس اسنٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی سے 2002 سے 2006 کے دوران تعلیم حاصل کی جس کے بعد وہ 2006 سے 2010 تک لبنان میں ورلڈ بینک کے کنٹری منیجر کے عہدے پر فائز رہے۔

اردن کے بادشاہ عبد اللہ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے ہم خطے کو ان دنوں جاری بحران سے نکالنا چاہتے ہیں اور ملکی معیشت کی مضبوطی کے لیے ہم ممکن اقدامات کریں گے جبکہ نامزد وزیر اعظم جلد منصب پر فائز ہوجائیں گے۔


بے روزگاری میں اضافے کے خلاف مظاہرہ، اردن کے وزیر اعظم مستعفی


یاد رہے کہ دو سال تک وزارت عظمیٰ کے منصب پر فائز رہنے والے اردن کے سابق وزیر اعظم ’حانی الملکی‘ نے گذشتہ روز اردن کے بااختیار بادشاہ ’عبد اللہ‘ کے پاس اپنا استعفیٰ جمع کرایا تھا جسے منظور کرتے ہوئے بادشاہ نے دیگر حکومتی وزرا کو معاملات سنبھالنے کے احکامات دیے تھے۔

خیال رہے کہ اردن کی معیشت اس وقت حکومت کی ناقص پالیسی کی وجہ سے شدید بحران کا شکار ہے، علاوہ ازیں مملکت میں بے روزگاری کی شرح میں بھی مسلسل اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

واضح رہے کہ عالمی معاشی ماہرین یہ خیال ظاہر کررہے ہیں کہ نئے آنے والے وزیر اعظم کو بھی ملک کو اس بحران سے نکالنے کے لیے بہت محنت کرنا پڑے گی اور اہم فیصلے لینے ہوں گے تاکہ تباہ ہوتی معیشت بچائی جاسکے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں