The news is by your side.

Advertisement

کشمیریوں سے اظہارِ یکجہتی ، ملک بھر میں کل ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی جائے گی

اسلام آباد : ترجمان دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ کشمیریوں سے اظہاریکجہتی کیلئے ملک بھرمیں کل ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی جائے گی اور مطالبہ کیا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے عالمی برادری اپنا مثبت کردار ادا کرے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ چوہدری نے میڈیا بریفنگ میں کہا ہے کہ ہر سال 5فروری کو یوم یکجہتی کشمیر منایا جاتا ہے ، ملک بھرمیں کل ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی جائے گی ، پاکستانی سفارتخانوں میں سیمینار،تقریبات منعقد کی جائیں گی۔

ترجمان دفترخارجہ کا کہنا تھا کہ کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے کل واک کا اہتمام ہوگا، واک کااہتمام وفاقی اورصوبائی دارالحکومتوں میں ہوگا، عالمی برادری مقبوجہ کشمیر میں بھارت کی جارحیت کو روکے۔

زاہد حفیظ نے کہا کہ پچھلی 7دہائیوں سے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت جاری ہے ، مقبوضہ کشمیر میں بھارت یواین قرارادوں کی خلاف ورزی کررہا ہے، مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے عالمی برادری اپنا مثبت کردار ادا کرے۔

مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کے حوالے سے ترجمان کا کہنا تھا کہ گزشتہ ہفتے کے دوران مذید 3کشمیریوں کو شہید کیا گیا ، غیر مسلح اور معصوم کشمیریوں کوماورائے عدالت قتل کیا جا رہا ہے اور کشمیری قیادت مسلسل قید میں ہے۔

بھارت میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی سے متعلق دفترخارجہ کے ترجمان نے کہا آر ایس ایس،بی جے پی گٹھ جوڑکی حکومت جمہوریت نہیں ، اقلیتوں اور صحافیوں کیساتھ بدترین سلوک روا رکھا جا رہا ہے ، بھارت عالمی برادری کے سامنے مکمل بے نقاب ہو چکا ہے ، دنیا بھر سےمختلف شعبہ جات کی شخصیات کشمیر پر بات کررہی ہیں۔

زاہد حفیظ کا بریفنگ میں کہنا تھا کہ بھارت ریاستی دہشت گردی اور پاکستان مخالف پروپیگنڈاکررہاہے، بھارت دہشت گردی کیلئے فنڈنگ سمیت ہرقسم کی کارروائیوں میں ملوث ہے ، اسی حوالے سےہم نے اقوام متحدہ ،عالمی برادری سے ڈوزیئر بھی شیئرکیا۔

ترجمان نے مزید کہا کہ بھارت فالس فلیگ آپریشن کرتاہےاورالزام پاکستان پر لگاتا ہے ، اس حوالے سے ای یو ڈس انفو لیب کی رپورٹ سب کےسامنے ہے، بھارتی نیوی کا حاضر سروس افسر ہماری حراست میں ہے ،ہم بھارت کو ہر سطح پر بے نقاب کرتے رہیں گے۔

افغانستان کے حوالے سے ترجمان دفترخارجہ کا کہنا تھا کہ افغان امن عمل اسوقت بہت اہم مرحلے میں داخل ہو چکا ہے ، افغانستان کے مسئلہ کا کوئی فوجی حل نہیں ، افغان مسئلہ کو سیاسی مذاکرات کے ذریعے حل کیا جانا چاہیے ، امن عمل آگے بڑھانےکیلئےچاہتے ہیں افغانستان میں تشدد میں کمی ہو۔

پاک بھارت مذاکرات سے متعلق زاہد حفیظ نے کہا کہ پاکستان نے بھارت کے ساتھ مذاکرات سے کبھی انکار نہیں کیا ، پاکستان سمجھتا ہے تمام تنازعات کا حل پرامن طریقے سےممکن ہے ، 5اگست 2019 سے کشمیر میں سخت محاصرہ ہے ، مقبوضہ کشمیر میں سرچ آپریشن اور غیر قانونی چھاپے ہیں اور کشمیریوں کے تمام حقوق سلب ہیں۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ جب تک بھارت تمام اقدامات ختم نہیں کرتا اسوقت تک بات ممکن نہیں ، پاکستان اور بھارت دونوں ممالک کی فوجی قیادت کےبیانات میں فرق ہے، آرمی چیف جنرل باجوہ نے امن اور کشمیر کے حل کی بات کی ہے جبکہ بھارتی فوجی قیادت غیر ذمہ دارانہ ،پاکستان مخالف بیانات دیتی ہے ، بھارتی قیادت نے پہلے بالاکوٹ پھرلداخ پر مس ایڈونچرکیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں