site
stats
عالمی خبریں

اورلینڈو واقعہ، امریکا میں مسلمانوں کے لئے صورتحال پیچیدہ

واشنگٹن : اورلینڈو واقعے کے بعد امریکا میں مسلمانوں کے لئے صورتحال پیچیدہ ہوگئی ہے۔

نائن الیون کے بعد امریکا میں دہشتگردی کے ایک اور واقعہ نے امریکی مسلمانوں کے لئے صورتحال مزید گھمبیر کردی ہے، امریکی شہر اورلینڈو کے نائٹ کلب پر حملے میں 50افراد کی ہلاکت کے بعد ایک بار پھر مسلمان پوری دنیا میں تنقید کی زد میں آگئے ہیں کیونکہ حملہ آور مسلمان تھا، ایک شخص کی وجہ سے مسلمانوں اور مذہب اسلام پر تنقید کی جارہی ہے۔

اس طرح کے واقعات امریکی صدارتی ڈونلڈ ٹرمپ کو مسلمانوں پر تنقید کا جواز فراہم کررہے ہیں، ڈونالڈ ٹرمپ کے مسلمانوں کے خلاف جذبات کسی سے ڈھکے چھپے نہیں ، جو مسلمانوں کی مشکلات میں اضافہ کررہے ہیں۔

اورلینڈو فائرنگ واقعہ کے فوری بعد ری پبلکن صدارتی امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ ثابت ہوگیا ہے ان کے مسلم مخالف بیان درست تھے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کو مسلمانوں کے خلاف زہر اگلنے کا ایک اور موقع مل گیا، انکا کہنا تھا کہ ان ممالک کے لیے امیگریشن پالیسی ختم کردوں گا جہاں سے دہشت گردی کا تعلق ثابت ہوگا۔

دوسری طرف ڈیموکریٹک امیدوار ہلری کلنٹن بھی بنیاد پرستی پر بات کررہی ہیں لیکن ہلری کلنٹن یہ بھی کہتی ہیں کہ مسلمانوں کی اکثریت شدت پسندی کی مخالف ہے۔

اس وقت امریکہ میں صدارتی جنگ کا مرکز مسلم مخالف رحجانات بنتا نظر آرہا ہے، یہ صورتحال جہاں مسلمانوں کے لئے تشویش کا باعث ہے وہیں امریکہ کی ملٹی کلچرل سوسائٹی کے تصور سے بھی متصادم ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ سال دسمبر میں سان برنارڈینو حملے کے بعد ٹرمپ نے مسلمانوں کے امریکا میں داخلے پر پابندی کی تجویز پیش کرتے ہوئے کہا تھا اگر وہ صدر بن گئے تو مسلمانوں کے امریکا میں داخلے پر پابندی عائد کردیں گے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top