The news is by your side.

Advertisement

نوعمروں‌ کو مٹاپے سے کیسے بچایا جائے؟ تجاویز اور مشورے

دورِ جدید کی بعض‌ آسائشیں‌ اور سہولیات ایسی ہیں‌ جن کا ہماری صحّت اور جسمانی کارکردگی پر گہرا اثر پڑا ہے اور ہم زیادہ آرام طلب اور تساہل پسند ہوگئے ہیں جس کے نتیجے میں فربہی یا مٹاپے کا مسئلہ جنم لے رہا ہے۔

بچّوں کی بات کی جائے تو وزن کی زیادتی انھیں‌ مستقبل میں صحّت کے حوالے سے کئی خطرات سے دوچار کرسکتی ہے۔ اسمارٹ فونز اور اسکرین کے سامنے زیادہ وقت گزارنے والے بچّے ایسی جسمانی سرگرمیوں سے محروم ہورہے ہیں‌ جو ان کی مجموعی صحّت اور کارکردگی کے لیے ضروری ہیں‌۔

اس حوالے سے عوامی صحّت اور علاج معالجے سے متعلق مختلف فورمز پر طبّی ماہرین نے تشویش ظاہر کی ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ بدلتی ہوئی دنیا میں‌ بچّوں‌ میں‌ صحّت مند اور مفید رجحانات پروان چڑھانے کی ضرورت کئی گنا بڑھ گئی ہے اور والدین، ​​سرپرستوں اور اساتذہ کو چاہیے کہ انھیں‌ جسمانی سرگرمیوں کی طرف راغب کریں، میدان میں‌ کھیل کود اور باقاعدگی سے ورزش کی اہمیت سے آگاہ کریں۔

اس کے ساتھ ماہرینِ غذائیات کی مدد سے بچّوں کو صحّت بخش اور متوازن غذا کے استعمال کا عادی بنانے کی ضرورت ہے جو مٹاپے کا راستہ روک سکتی ہے۔

ماہرین کے مطابق بچّوں کی معمول اور عمر کے مطابق جسمانی نشوونما بہت ضروری ہے جس کے لیے بڑھتی ہوئی عمر میں بچّوں کی راہ نمائی کرتے ہوئے ان میں‌ صحّت مند غذائی عادات کو پروان چڑھانا ہو گا۔ اس ضمن میں‌ والدین کے لیے ماہرین کی چند راہ نما تجاویز اور مشورے پیش ہیں‌۔

بچوں کو سبزیوں، پھلوں اور ہر قسم کے اناج کا شروع ہی سے عادی بنائیں۔ ان کی خوراک میں کم چکنائی یا بغیر چکنائی والا دودھ، ڈیری مصنوعات بشمول پنیر اور دہی شامل رکھیں‌۔

بچّوں کو پروٹین سے بھرپور خوراک دینے کے لیے انھیں مچھلی، دالوں اور پھلیوں کا عادی بنائیں۔

چینی اور سیچوریٹڈ فیٹس کا استعمال کم رکھیں۔ میٹھے مشروبات، ڈرنکس اور بازار سے جوس وغیرہ خرید کر پینے کی حوصلہ شکنی کریں۔

طبّی ماہرین کے مطابق زائد چکنائی، چینی اور نمک کے استعمال سے صحّت کو پہنچنے والے نقصانات پر بچّوں کو سادہ زبان میں‌ معلومات اور آگاہی دیں۔ اپنے بچّوں کو باہر کے کھانے اور مرغن غذائیں کھانے کی اجازت کم ہی دیں‌ اور انھیں‌ صحّت بخش اور متوازن غذا و خوراک کا عادی بنائیں۔

محققین کے مطابق 6 سے 17 سال کی عمر کے بچّوں اور نوعمروں کو ہر دن کم از کم 60 منٹ تک جسمانی طور پر سرگرم رہنا چاہیے۔ انھیں بھاگنے دوڑنے، اچھل کود کا موقع دیں تاکہ ان کے جسم کے جوڑ اور پٹھے وغیرہ مضبوط ہوں۔ نوعمری میں‌ ورزش کی عادت ڈالیں۔

طبّی محققین کے مطابق نیند کی کمی بھی مٹاپے کا باعث بنتی ہے۔ نیند کے لیے بستر پر جانے کا وقت مقرر کریں اور بچّوں کو اس کا پابند بنائیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں