The news is by your side.

Advertisement

پی اے سی اجلاس میں سگریٹ نوشی میں اضافے کا انکشاف

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کی زیر صدارت پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے اجلاس میں انکشاف کیا گیا کہ ملک میں سگریٹ نوشی میں اضافہ ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پی اے سی اجلاس میں آڈٹ حکام نے تمباکو پر ایکسائز ٹیکس کی رپورٹ پیش کرتے ہوئے کہا کہ سگریٹس پر تھری ٹیئرز پالیسی کے نفاذ کے باعث سگریٹ نوشی میں اضافہ ہوا۔

آڈٹ حکام نے کمیٹی کو بتایا کہ غیرقانونی سیگریٹس کی فروخت میں بھی 25 فیصد اضافہ ہوا ہے، جب کہ ٹیکسوں کی وصولی میں واضح کمی ہوگئی ہے۔

آڈٹ حکام کا کہنا تھا کہ سگریٹس کی غیرقانونی فروخت کی روک تھام کے لیے قانون نافذ کرنے والے اداروں کا استعمال نہیں کیا گیا، رپورٹ میں کہا گیا کہ ایف بی آر کے قانون میں بھی اس ضمن میں سقم پایا جاتا ہے۔

پی اے سی اجلاس میں ایف بی آر نے رپورٹ پر جواب دینے کے لیے وقت مانگ لیا تاہم پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے ایف بی آر کی طرف سے مزید وقت مانگنے پر تحفظات کا اظہار کیا، کمیٹی کے چیئرمین خورشید شاہ نے ایف بی آر کے نمائندے سے کہا کہ ہمارے پاس وقت نہیں ہے۔

افطار کے بعد سگریٹ نوشی سے اچانک موت کا خطرہ


واضح رہے کہ نیشنل ہیلتھ سروسز کی وزارت نے ایف بی آر کو گزشتہ مہینے کے آغاز میں سفارش کی تھی کہ تمباکو مصنوعات پر تھری ٹئیرز پالیسی کے تحت ٹیکسوں میں کمی پر عمل نہ کرے جس کے نتیجے میں سگریٹوں کی قیمتیں کم ہوئیں اور استعمال میں اضافہ ہوا۔

خیال رہے کہ تہرے ٹیکس کے سسٹم سے ملٹی نیشنل کمپنیوں کی آمدنی تو بڑھ گئی لیکن اس کے مقابلے میں مقامی سگریٹ ساز کمپنیاں بند ہوئیں کیوں کہ ملٹی نیشنل کمپنیوں کے برانڈز پر کوئی فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی لاگو نہیں ہوتی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں