The news is by your side.

Advertisement

پدماوتی کی ریلیز سے قبل ایک شخص موت کی بھینٹ‌ چڑ گیا

نئی دہلی: بھارت کی متنازع ترین فلم پدماوتی کے خلاف احتجاج کرنے والے ہندو انتہاء پسند اس قدر بے قابو ہوگئے انہوں نے ایک شخص کو گلے میں پھندا ڈال کر قتل کردیا۔

تفصیلات کے مطابق راجپوت برادری کی رانی ‘پدمنی‘ کی زندگی پر بننے والی فلم کی ریلیز روکنے کے لیے انتہاء پسند بے قابو ہیں، فلم کی ریلیز کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست بھی دائر کی گئی تاہم عدالت نے اُسے مقررہ وقت یعنی یکم دسمبر کو ہی ریلیز کرنے کا حکم دیا تاہم فلم ڈائریکٹر نے کشیدگی کے باعث پدماوتی کی ریلیز ملتوی کردی۔

راجپوت برادری کی تنظیم شری راجپوت سبھا کے صدر نے فلم کی ریلیز روکنے کے لیے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی تھی، جس میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ فلم کی ریلیز سے مذہبی جذبات اور ثقافت کو ٹھیس پہنچ سکتی ہے لہذا اسے فوری طور پر روکا جائے۔

سماعت کے دوران درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا تھا کہ حکومتی ادارے سینٹرل بورڈ فلم سرٹیفکیشن کو خود سمجھنا چاہیے کہ فلم کی ریلیز کے بعد گھمبیر صورتحال پیدا ہوسکتی ہے۔

مزید پڑھیں: فلم پدماوتی ریلیز ہونے پر دپیکا اور بھنسالی کے سر کی قیمت مقرر

راجپوت کرنی سینانے فلم کی ریلیز کے خلاف محاذ کھڑا کررکھا ہے، ہندوانتہا پسندوں نے گزشتہ دنوں پدماوتی کے ڈائریکٹر سنجے لیلا بھنسالی اور مرکزی اداکارہ دپیکا کے سر کی قیمت 5 کروڑ روپے مقرر کرتے ہوئے ناک کاٹنے کی دھمکی دی تھی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق جے پور کے نہر گڑھ قلعے سے ایک شخص کی پھندا لگی لاش برآمد ہوئی جسے پتھر سے باندھا ہوا تھا اور اُس پر پدماوتی کے خلاف دھمکی آمیز تحریر درج تھی۔

پولیس کے کے مطابق مقتول کی شناخت 40 سالہ چیتن سینائی کے نام سے ہوئی، لاش کے قریب پتھر پر تحریر کیا گیا تھا کہ ’ہم صرف پتلے نہیں جلاتے بلکہ بندے کو لٹکا بھی دیتے ہیں‘۔

یہ بھی پڑھیں: سنگین نتائج کی دھکیوں کی بعد بھارتی فلم پدماوتی کی ریلیزملتوی

دوسری جانب مقتول کے بھائی کا کہنا ہے کہ ’چیتن کی موت کسی حملے کی صورت میں نہیں بلکہ اُس نے خودکشی کی، پتھر پر لکھی جانے والی تحریر سے بھائی کی موت کا کوئی تعلق نہیں ہے‘۔

خیال رہے کہ پدماوتی فلم ہندوستان کے شدت پسند حلقے پہلے ہی اعتراض اٹھا رہے ہیں اور اسے متنازع ترین فلم قرار دیا جارہا ہے کیونکہ یہ فلم بھارتی ریاست چتر گڑھ کی رانی پدمنی کی زندگی پر بنائی گئی ہے، تاریخ دانوں کا کہنا ہے کہ پدمنی نے بادشاہ علاؤ الدین خلجی سے خود کو بچانے کے لیے آگ میں کود کر خودکشی کی تھی۔

سنجے لیلا بھنسالی کی ہدایت میں بننے والی فلم رواں سال دسمبر کی پہلی تاریخ کو سینیما گھروں میں نمائش کے لیے پیش کی جائے گی، جس میں رنویر سنگھ بادشاہ علاؤالدین اور دییکا پڈوکون رانی پدمنی کا کردار ادا کررہی ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں