The news is by your side.

Advertisement

کوئی بھی امریکی عہدیدار شیڈول کے بغیر پاکستان نہیں آئے گا، پاکستان

اسلام آباد : ڈو مور کرنے والوں کو کرارا جواب دینے کیلئے پاکستان نے امریکا سے متعلق پالیسی میں بڑی تبدیلی کردی ، جس کے مطابق کوئی بھی امریکی عہدیدار اسلام آباد کی مرضی کے بغیر پاکستان کے دورے پر نہیں آسکتا، دورے کا شیڈول باہمی مشاورت سے طے کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق ٹرمپ انتظامیہ کے پاکستان مخالف بیانات بعد پاکستان نے امریکا سے سفارتی تعلقات کی سطح بدلنے کا فیصلہ کرلیا، جس کے بعد امریکا کا کوئی بھی عہدیدار اب منہ اٹھا کر پاکستان نہیں آسکتا۔

ذرائع کے مطابق فیصلہ کیا گیا ہے کہ کوئی بھی امریکی عہدیدار باہمی مشاورت سے طے شدہ شیڈول کے بغیر پاکستان کا دورہ نہیں کرسکیں گے۔


مزید پڑھیں : ٹرمپ کے الزامات، پاکستان کی امریکی نائب وزیرخارجہ کی میزبانی سے معذرت


ذرائع کا کہنا ہے یہ فیصلہ پاکستان سے تعلقات معمول کے مطابق نہ رہنے کے ٹرمپ انتظامیہ کے بیان کے بعد کیا گیا ہے، امریکی نائب وزیرخارجہ کا دورہ پاکستان اسی وجہ سے ملتوی کرایا گیا۔

یاد رہے کہ اتوار کو پاکستان نے نائب امریکی وزیرخارجہ کی میزبانی سے بھی معذرت کرلی تھی، ایلیس ویلز کو کہہ دیا گیا ہے کہ وہ فی الحال پاکستان نہ آئیں، امریکی نائب وزیرخارجہ اسی ہفتے اسلام آباد آرہی تھیں۔

د رہے کہ افغانستان اور جنوبی ایشیا سے متعلق امریکی پالیسی بیان کرتے ہوئے پاکستان سے پھر ڈومور کا مطالبہ کیا تھا جبکہ ساتھ ساتھ پاکستان کو دھمکیاں دے ڈالیں اور کہا اربوں ڈالر دیئے ہیں نتائج چاہئیں، پاکستان کو دہشت گردوں کےٹھکانوں کا صفایا کرنا ہوگا۔


مزید پڑھیں : امریکہ نے پاکستان کو اربوں ڈالر دیئے ہیں، نتائج چاہئیں، ڈونلڈ ٹرمپ کا مطالبہ


ڈونلڈ ٹرمپ نے دھمکی دی تھی کہ افغانستان میں ہماراساتھ دینے پر پاکستان کوفائدہ ہوگا، دوسری صورت میں اسے نقصان کا سامنا کرنا پڑے گا،  پاکستان اکثر ان افراد کو پناہ دیتا ہے، جو افراتفری پھیلاتے ہیں، پاکستان ہمارا اہم اتحادی ہے، پاکستان نےدہشت گردی کے خلاف جنگ میں بہت نقصان اٹھایا ہے


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں