The news is by your side.

Advertisement

بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے رہنماوں کی پھانسی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے، نثار

اسلام آباد: وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثارعلی خان نےبنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے دو ارکان کو پھانسی دیئے جانے پرتشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ماضی کو بھلا کر آگے بڑھنا چاہتے ہیں۔

چوہدری نثارکاکہنا تھا کہ پاکستان اور بنگلہ دیش کے عوام ماضی کی تلخیاں بھلا کر دوستی اور بھائی چارے سے تعلقات آگے بڑھانا چاہتے ہیں مگر بنگلہ دیش میں ایک گروہ بنگلہ دیشی اور پاکستانی عوام میں بھائی چارے کی فضا کو بحال ہوتے ہوئے نہیں دیکھ سکتا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں اندازہ ہے کہ بنگلہ دیش میں اس گروہ کے پیچھے کون ہے اور 1970-71کے واقعات کے پیچھے اسکا کیا کردار تھا۔

ہم یہ بھی جانتے ہیں کی پاکستان اور بنگلہ دیش کے عوام کو قریب آنے سے کون سی طاقتیں روک رہی ہیں اور اس کے پیچھے کن عناصر کی سازشیں کارفرماء ہیں۔

وزیر داخلہ چوہدری نثار نے کہا کہ جو کچھ بنگلہ دیش میں ہو رہا ہے وہ اخلاقیات، بین الاقوامی قوانین اور انسانی حقوق کی پامالی ہے انہوں نے بین الاقوامی انسانی حقوق کے اداروں کی اس قتل پر خاموشی پر حیرانی کا ظہار کیا۔

چوہدری نثارنے مزید کہا کہ انتہائی رنجیدہ ہوں کہ ہم ان لوگوں کے لئے کچھ نہ کر سکے جن کا قصور صرف اتنا ہے کہ انہوں نے آج سے 45 سال پہلے اپنے وطن پاکستان سے وفاداری نبھائی اور اس وقت کی ایک آئینی اور قانونی حکومت کا ساتھ دیا۔

وزیر داخلہ چوہدری نثار نے کہا کہ آئندہ کابینہ کے اجلاس میں یہ مسئلہ پھر اٹھاؤں گا تاکہ بنگلہ دیش حکومت کے انتقام کی آگ کے آگے دیوار کھڑی کی جا سکے۔ حاسدین جو بھی کہہ لیں پاکستانی اور بنگلہ دیشی عوام کے دل ایک ساتھ دھڑکتے ہیں اور وہ دونوں برادر ممالک کو قریب سے قریب تر دیکھناچاہتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں