The news is by your side.

Advertisement

امریکا طالبان مذاکرات منسوخ، پاکستان کا بات چیت جاری رکھنے پر زور

اسلام آباد: افغان طالبان اور امریکا کے درمیان مذاکرات معطل ہونے پر پاکستان نے فریقین پر زور دیا ہے کہ بات چیت کا سلسلہ جاری رکھا جائے۔

تفصیلات کے مطابق امریکا طالبان امن عمل کی منسوخی پر ترجمان دفترخارجہ ڈاکٹر فیصل کا کہنا ہے کہ پاکستان نے ہمیشہ پرتشدد کارروائیوں کی حوصلہ شکنی اور مذمت کی ہے۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ پاکستان نے مذاکرات کے فریقین کو تحمل سے بات چیت جاری رکھنے پر زور دیا ہے، پاکستان نے مشترکہ ذمہ داری پر افغان امن کیلئے سہولت کار کا کردار ادا کیا۔

دفترخارجہ کے مطابق چاہتے ہیں صبروتحمل اور مخلصانہ طریقے سے امن عمل آگے بڑھایا جائے، پاکستان حالیہ صورت حال پر نظر رکھے ہوئے ہے۔

پاکستان نے ایک بار پھر واضح کیا کہ افغانستان کے مسئلے کا حل سیاسی ہے، فریقین جلد مذاکرات کی میز پر آکر افغان مسئلے کا سیاسی حل تلاش کریں۔

ڈاکٹر فیصل کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان افغان امن عمل کے مذاکرات کی جلد بحالی کا خواہاں ہے۔

خیال رہے کہ امریکا اور طالبان کے درمیان کئی ہفتوں سے جاری مذاکرات اب منسوخ ہوچکے ہیں، قطری دارالحکومت دوحہ سمیت روس بھی مذاکراتی دور رکھے گئے تاہم کوئی حتمی نتیجہ نہیں نکلا۔

افغان امن مذاکرات کی منسوخی کا سب سے زیادہ نقصان امریکا کو ہوگا، ترجمان طالبان

فریقین کے درمیان افغان امن عمل سے متعلق امریکی عہدیداروں میں بھی اختلافات تھے۔ غیر ملکی میڈیا نے دعویٰ کیا تھا کہ امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو طالبان سے ہونے والے معاہدے سے کئی نکات کے خلاف تھے۔

ادھر طالبان ذبیح اللہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ امریکی ٹیم کے ساتھ مذاکرات مفید رہے اور معاہدہ مکمل ہوچکا ہے، فریقین معاہدہ کے اعلان اور دستخط کی تیاریوں میں مصروف تھے کہ امریکی صدر نے مذاکراتی سلسلے کو منسوخ کرنے کا اعلان کردیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں