site
stats
پاکستان

ملک بھر میں مذہبی تنظیمیں آج ڈونلڈٹرمپ کےاعلان کیخلاف احتجاج کریں گی

کراچی : مقبوضہ بیت المقدس کواسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے پر امریکا کیخلاف ملک بھر کی مذہبی تنظیمیں سراپا احتجاج ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ڈونلڈٹرمپ کے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا داراخلافہ بنانے کا اعلان کیخلاف ملک بھر میں مذہبی تنظیمیں آج احتجاج کریں گی۔

احتجاجی مظاہروں کے پیش نظرامریکی سفارتخانے کے اطراف سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں جبکہ احتجاجی مظاہرین کی آمد کے پیش نظر امریکی سفارتخانے اور متصل تمام راستوں پر بڑی تعداد میں کنٹینرز رکھ دیئے گئے ہیں۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ بارہ بجے کنٹینر رکھ کر امریکی سفارتخانے آنے والے تمام راستوں کو بند کردیا جائے گا، راستہ سیل کرنے کے بعد پولیس اور رینجرز کی جانب سے سیکیورٹی اہلکاروں کو مختلف راستوں پر تعینات کیا جائے گا۔

جماعت اسلامی کے رہنما حافظ نعیم الرحمان کا کہنا ہے کہ ٹرمپ کا فیصلہ عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی ہے، مسلم ممالک کی اتحادی افواج قبلہ اول کی آزادی کیلئے کرداراداکرے، پوری دنیا کے مسلمانوں کو اٹھ کھڑے ہونے کی ضرورت ہے۔

حافظ نعیم الرحمان نے مزید کہا کہ امریکی صدرکی دہشت گردی کےخلاف مسلم ممالک ایک ہوجائیں، آج بیت المکرم مسجد کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا۔

گذشتہ روز  امیرجماعت اسلامی سراج الحق نے ٹرمپ کے اعلان پرکل ملک گیراحتجاج کی اپیل کرتے ہوئے کہا تھا کہ  ٹرمپ نے عالمی امن کو خطرے میں ڈال دیا ہے، مسلم حکمران متحد ہوکر امریکی فیصلے کے خلاف لائحہ عمل دیں ، ٹرمپ کا فیصلہ جلتی پرتیل کے مترادف ہے۔


مزید پڑھیں : امریکا نے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرلیا


واضح رہے کہ امریکی صدرڈونلڈٹرمپ نے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرلیا، ٹرمپ کے فیصلے پر مسلمان ملکوں کی جانب سے شدید ردعمل کا اظہار کیا جارہا ہے جبکہ مختلف شہروں میں مظاہرے کئے جارہے ہیں۔

امریکا صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ کئی امریکی صدور نے اس اقدام کا سوچا تھا لیکن وہ ایسا نہیں کرسکے اس لیے یہ معاملہ کافی برسوں سے التواء کا شکار تھا، جس پر میں آج سخت فیصلہ کرتے ہوئے یروشلم کو اسرائیل کا دارالخلافہ تسلیم کرنے کا اعلان کرتا ہوں اور اس مشکل کام کو انجام تک پہنچانے  پر خوشی محسوس کر رہا ہوں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top