site
stats
کھیل

دوسرا ٹی ٹوئنٹی : پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو ہرا دیا

پورٹ آف اسپین : حسن علی کے کامیاب اوور کے باعث پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو دوسرے ٹی ٹوئنٹی میں تین رنز سے شکست دے دی ہے یوں چار میچوں کی سیریز میں پاکستان کو دو میچوں کی برتری حاصل ہوگئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق دوسرے ٹی ٹوئنٹی میچ میں پاکستان ویسٹ انڈیز کے خلاف مقررہ اوور میں 132 رنز بنانے میں کامیاب رہی تھی اس دوران پاکستان کی پوری ٹیم آؤٹ ہوگئی تھی۔


*احمد شہزاد ویسٹ انڈین بلے باز سے ٹکرا کر شدید زخمی


پاکستان کی جانب سے شعیب ملک 28 رنز کے ساتھ سر فہرست رہے جب کہ بابر اعظم 27 اور وہاب ریاض نے 24 رنز بنائے۔

ویسٹ انڈیز کی جانب سے کارلوس اور نارائن نے تین تین جب کہ بدری نے 2 کھلاڑیوں کو آؤٹ کر کے پاکستان کو 132 کے مجموعی اسکور تک محدود رکھا۔

ویسٹ انڈیز کا آغاز کچھ بہتر رہا تاہم پاکستانی باؤلرز نے ویسٹ انڈیز بلے بازوں کو کُھل کر کھیلنے سے روکے رکھا جب کہ فیلڈرز نے اپنے باؤلرز کا بھرپور ساتھ دیا۔

آخری اوورز میں دو چوکے کھانے کے باوجود حسن علی عمدہ کم بیک کیا اور دو ڈاٹ بول کے ساتھ ساتھ ایک کھلاڑی کو پویلین کی راہ دکھائی اور پاکستان کو 3 رنز سے فتح دلوا دی۔

ویسٹ انڈیز کی جانب سے سب سے زیادہ اسکور سیموئیل بنایا جب کہ شاداب علی نے چار کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی جس پر انہیں مین آف دی میچ قرار دیا گیا تاہم آخری اوور میں حسن علی کی شاندار بولنگ نے پاکستان کو شکست سے بچا یا۔

یاد رہے قبل ازیں ویسٹ انڈیز کے کپتان بریتھ ویٹ نے ٹاس جیت کر پاکستان کو بیٹنگ کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ پچ میں موجود نمی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے پاکستانی ٹیم کو جلد آؤٹ کرنے کی کوشش کریں گے اور پچھلی ہار کو بھول کر نئی جیت کا سفر جاری رکھیں گے۔

اس موقع پر پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا کہ ٹاس جیتنا اہم ضرور ہے لیکن حتمی امر نہیں گراؤند میں وہ ٹیم جیتی ہے جو لگن، محنت اور ہر میچ میں فتح کے لیے کھیلتی ہو اور یہ تمام چیزیں ہماری ٹیم میں موجود ہے اسی یقین سے پہلا میچ جیتا تھا اور اسی جذبے سے یہ میچ بھی اپنے نام کریں گے۔

واضح رہے کہ پہلے ٹی ٹوئنٹی میچ میں پاکستان نے میزبان ٹیم کو شکست سے دوچار کیا تھا اور اس میچ میں شاداب خان کی اپنی بہترین کارکردگی کی بدولت میچ آف دی میچ قرار پائے تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top