لالی وڈ کی مشہور اداکارہ رانی کی69ویں سالگرہ منائی جارہی ہے -
The news is by your side.

Advertisement

لالی وڈ کی مشہور اداکارہ رانی کی69ویں سالگرہ منائی جارہی ہے

پاکستان فلم انڈسٹری کی لازوال اداکارہ رانی کی 69ویں سالگرہ منائی جارہی ہے ۔

اداکارہ رانی 8دسمبر 1946 میں لاہور میں پیدا ہوئیں، انیس سو ساٹھ میں صرف چودہ سال کی عمر میں فلم “محبوب” سے اپنے فنی سفر کا آغاز کیا، رانی کو ابتدا میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا،جس پر فلمساز انہیں نئی فلموں میں کاسٹ کرنے سے گریز کرنے لگے لیکن اداکارہ رانی ہمت ہارنے کی بجائے پہلے سے زیادہ لگن اور محنت کے ساتھ کام کرنے لگیں۔

بعدازاں فلم “دیوربھابی” کی کامیابی کے بعد رانی کی قسمت کا ستارہ چمک اٹھا، اس سے اگلے سال ہی ان کی ایک اور سپر ہٹ فلم ‘بہن بھائی’ ریلیز ہوئی جو سپر ہٹ ثابت ہوئی.

رانی کو شہرت کی بلندیوں پر پہنچانے والی فلم ‘انجمن’ تھی جو 1970 میں ریلیز ہوئی، جس کے بعد رانی نے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا،اس فلم کے تمام گیت انتہائی معروف ہوئے، جن میں اظہار بھی مشکل ہے کچھ کہہ بھی نہیں سکتے، یا آپ دل کی انجمن میں حسن بن کر آگئے مشہور ہیں۔

اس کے بعد ان کی فلم ‘تہذیب’ اور ان کی زندگی کی سب سے ہٹ فلم ‘امراﺅ جانِ ادا ریلیز ہوئی، اس فلم کے گیتوں نے بھی تہلکہ مچایا، جس میں “جو بچا تھا وہ لٹانے کیلئے آئے ہیں ” بہت مشہور ہوا.

رانی کی یکے بعد دیگرے سپرہٹ فلموں میں ایک گناہ اور سہی، بہارو پھول برساﺅ، ناگ منی اور ثریا بھوپالی وغیرہ قابل ذکر ہیں.

رانی نے تین شادیاں کیں، رانی نے پہلی شادی ہدایتکار حسن طارق سے کی، جس کے بعد رانی نے حسن طارق کے ساتھ انجمن ، تہذیب ، امرا جان ادا ،سیتا مریم مارگریٹ جیسی یادگار فلموں میں کام کیا، ہدایتکار حسن طارق سے طلاق کے بعد اداکارہ رانی نے فلمساز جاوید قمر سے شادی کی لیکن کچھ عرصہ بعد ہی علیحدگی ہوئی اور پھر انہوں نے سابق کرکٹر سرفراز نواز کے ساتھ شادی کی ۔

اداکارہ 27 مئی 1993 کو 46 برس کی عمر میں کینسر جیسے مرض سے انتقال کرگئیں لیکن ان کی اداکاری آج بھی مداحوں کے ذہنوں میں نقش ہے.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں