The news is by your side.

Advertisement

پراسرار بیماری میں مبتلا بے یارو مددگار پاکستانی بچی

مٹھی: سندھ کے علاقے مٹھی سے تعلق رکھنے والی 9 سالہ بچی ایک ایسی اچھوتی بیماری میں مبتلا ہے جس کی وجہ سے اُس کی گردن 180 کے زاویے پر لٹک گئی ہے، غریب والدین وسائل نہ ہونے کی وجہ سے بچی کا علاج کروانے سے قاصر ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سندھ کے علاقے مٹھی میں پیدا ہونے والی بچی افشین قمبر 8 ماہ کی عمر میں اپنے بہن بھائیوں کے ہمراہ کھیل رہی تھی کہ اُس کی گردن میں اندرونی چوٹ لگی جس کے بعد وہ پراسرار بیماری میں مبتلا ہوگئی۔

پراسرار بیماری لاحق ہونے کے بعد بچی کی گردن عام انسانوں کے مقابلے میں 180 ڈگری زاویے پر گھوم گئی اور اب وہ اپنی زندگی اسی طرح سے گزار رہی ہے، وہ بیت الخلا جانے اور کھانے پینے کے لیے بھی اپنی گردن سیدھی نہیں کرسکتی۔

افشین کی حالت دیکھ کر بچے گھبرا جاتے ہیں جبکہ گاؤں کے مقامی افراد کا ماننا ہے کہ بچی کا یہ حال کسی گناہ کے نتیجے میں ہوا۔

افشین کے والد اللہ جوریو کی عمر 55 جبکہ والدہ کی عمر 50 برس ہے، معاشی حالات اچھے نہ ہونے کے باعث والدین بچی کا علاج عام ڈاکٹروں سے کرواتے رہے جس کے باعث مرض مزید بگڑ گیا۔

والدہ کا کہنا ہے کہ ’افشین اپنے بہن بھائیوں کی طرح صحت مند پیدا ہوئی تھی تاہم وہ 8 ماہ کی عمر سے اس بیماری میں مبتلا ہوگئی، جب ہماری بچی ٹیڑھی گردن کے ساتھ چلتی ہے تو مجھے بہت تکلیف ہوتی ہے اب میں مزید اپنی بچی کو تکلیف میں نہیں دیکھنا چاہتی مگر وسائل نہ ہونے کی وجہ سے بہت مجبور ہوں‘۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز نے بیٹی کے علاج کے لیے جناح اسپتال کراچی جانے کی تجویز دی مگر ہمارے پاس پیسے اور وسائل نہیں جو بچی کا علاج کرواسکیں۔

مقامی ڈاکٹر کا کہنا ہے کہ انہوں نے اس طرح کے کیس کا پہلے کبھی سامنا نہیں کیا تاہم یہ بیماری ریڑھ کی ہڈی میں مسئلے کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے۔

ڈاکٹر دلیپ کا کہنا ہے کہ بیماری کے بارے میں حتمی بات ٹیسٹ ہونے کے بعد ہی کہی جاسکتی ہے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں