site
stats
پاکستان

پاکستان میں خواتین بھی اب باکسنگ میں نام پیدا کررہی ہیں

کراچی: لیاری کی لڑکیاں بھی اب باکسنگ کی دنیا میں بین الاقومی سطح پرملک کا نام روشن کرنے کے لئے بے تاب ہیں بس تھوڑی سی حکومتی توجہ ان کا خواب پورا کرسکتی ہے۔

1992میں کراچی کے علاقے لیاری میں کے چھوٹے سے کمرے میں بنے والا پاک شاہین کلب آج عالمی میڈیا کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے۔

کلب میں تربیت حاصل کرنے والی پندرہ سالہ عروج قمبرانی کہتی ہے کہ ایک ہی خواہش ہے کہ ’’قومی ہی نہیں بین الاقوامی باکسربن کرملک کا نام روشن کرے‘‘۔

کلب کے کوچ محمد یونس کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کھیلوں کے فروغ کی راہ میں سب سے بڑٖی رکاوٹ سامان کی کمی ہے تاہم اب صورتحال بہتر ہورہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں خواتین کی بہت کم تعداد نے باکسنگ کی تربیت حاصل کی ہے اس کے بوجود گزشتہ سال پاکستانی خواتین سیف گیمز تک پہنچ چکی ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی جانب سے معمولی توجہ پاکستان سے اچھی خواتین باکسر پیدا کرسکتی ہے۔

اس مثبت سرگرمی کی مقبولیت دیکھتے ہوئے لگتا ہے کہ لیاری میں اب کرائم کا دائرہ نہیں بلکہ باکسنگ کا رنگ مضبوط ہوتا جارہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top