پاکستانی خواجہ سرا کی فلم ’رانی‘ امریکی ایوارڈ حاصل کرنےمیں کامیاب -
The news is by your side.

Advertisement

پاکستانی خواجہ سرا کی فلم ’رانی‘ امریکی ایوارڈ حاصل کرنےمیں کامیاب

نیویارک: دنیا بھر میں پاکستان کا نام روشن کرنے والے خواجہ سرا کی فلم ‘رانی‘ نے کامیابی کے جھنڈے لہراتے ہوئے امریکی ایواڈ اپنے نام کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق امریکا میں منعقد ہونے والے ’این بی سی یونیورسل شارٹ فلم فیسٹیول‘ میں دنیا بھر سے تعلق رکھنے والے لوگوں نے حصہ لیا جن میں اُن کی جانب سے تیار کی جانے والی فلمیں دیکھی گئیں۔

پاکستان سے تعلق رکھنے والے خواجہ سرا ’کامی سڈ‘ نے امریکی فیسٹیول میں ’رانی‘ نامی فلم پیش کی جس میں خواجہ سراؤں کو پیش آنے والے مسائل پر روشنی ڈالی گئی۔

کامی سڈ کی فلم رانی کی کہانی ایک ایسے لاوارث بچے کی ہے جسے خواجہ سرا گود لے کر اُس کی پرورش کرتا ہے اور اُسے معاشرے کے لیے اچھی مثال بنا کر پیش کرتا ہے۔

حماد رضوی کی ہدایت کاری میں بننے والی فلم کی شوٹنگ کراچی میں ہوئی، ’رانی’ کو دیگر کئی فیسٹولز میں بھی نمائس کے لیے پیش کیا جاچکا جبکہ پاکستان میں اسے رواں برس جولائی میں ریلیز کیا گیا تھا۔

امریکی نشریاتی ادارے وائس آف امریکا سے گفتگو کرتے ہوئے کامی سڈ (کامران صدیقی) کا کہنا تھا کہ اب تک میں کئی فلموں میں کام کرچکی، فلم کا اچھا اسکرپٹ ہوگا تو بالی ووڈ انڈسٹری سے آنے والی پیش کش کو بھی مسترد نہیں کروں گی، دنیا آج بہت آگے نکل چکی اور اب شوبز میں بہت پروفیشنل طریقے سے کام ہورہا ہے۔

فلم رانی میں کام کرنے کے حوالے سے اُن کا کہنا تھا کہ ’ویسے تو میں کئی دستاویزی فلموں میں اداکاری کرچکی مگر یہ میرے لیے پہلا موقع تھا کہ حقیقی انداز سے اپنے معاشرے کو پیش کروں‘۔

کامی سڈ پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر ہیں اُن کا ماننا ہے کہ اب ہمارے معاشرے میں بہتری آرہی ہے اس لیے جنس تبدیل کروانے والوں کو بھی ہر شعبے میں کام دیا جارہا ہے۔

اُن کا مزید کہنا تھا کہ ’پاکستان میں موجود خواجہ سرا خوبصورت اور باصلاحیت ہیں بس انہیں اچھے مواقع فراہم نہیں کیے جاتے، بحیثیت پاکستانی ملک کا مثبت چہرہ دنیا کے سامنے پیش کرنے پر خود کو خوش قسمت سمجھتی ہوں‘۔

ٹریلر دیکھیں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں