The news is by your side.

Advertisement

فلسطین میں ماہ رمضان کےدوران طلاقوں پرپابندی

یروشلم : فلسطین کی شرعی عدالت کے سربراہ نے ججوں کو حکم دیا ہے کہ رمضان کے مہینے میں طلاقوں کے فیصلےنہ کریں۔

تفصیلات کےمطابق فلسطین میں ماہ رمضان کے دوران طلاقوں پر پابندی عائدکردی گئی،شرعی عدالت کے سربراہ نےمقدس ماہ کے دوران جج صاحبان کو طلاق کے فیصلے جاری نہ کرنے کا حکم دیا ہے۔

شرعی عدالت کے سربراہ جج محمود حبش نے کہا کہ انہوں نے یہ حکم گذشتہ کئی سالوں کے تجربے کی روشنی میں دیا ہے۔

انہوں نےکہاکہ یہ فیصلہ اس خوف کو مدنظر رکھتے ہوئے جاری کیا گیا ہے کہ غصے میں ادا کیے گئے الفاظ پر بعد میں لوگوں کوپشیمان نہ ہونا پڑے۔

شرعی عدالت کےسربراہ کا کہناہےکہ روزے میں کھانے، پینے اور سگریٹ کے استعمال پر پابندی لوگوں کے مزاج برہم کرنے اور بدزبانی کا باعث بنتی ہے اور وہ جلد بازی میں بغیرسوچے سمجھے فیصلہ کرلیتے ہیں۔

واضح رہے کہ فلسطینی انتظامیہ کے مطابق سال 2015 کے دوران غزہ کی پٹی اور مغربی کنارے پر 50 ہزار شادیاں ہوئیں لیکن اسی سال 8 ہزار طلاقوں کے کیس بھی رجسٹر ہوئے۔

حکام کے مطابق بے روزگاری اور غربت طلاق کی بڑی وجوہات ہیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں