پی آئی اے انتظامیہ اور پائلٹس تنازعہ، مسافر بری طرح پھنس کر رہ گئے -
The news is by your side.

Advertisement

پی آئی اے انتظامیہ اور پائلٹس تنازعہ، مسافر بری طرح پھنس کر رہ گئے

کراچی : پی آئی اے کے پائلٹس کی ہڑتال آج تیسرے روز میں داخل ہوگئی ہے، پالپا پی آئی اے تنازعہ بدستور برقرار ہے، بات چیت تاحال کسی نتیجے پر نہیں پہنچ سکی۔

حکومت، پالپا تنازعے میں پروازیں شدید متاثر ہوئیں اور مسافر مشکلات سے دوچار ہورہے ہیں، چوبیس گھنٹوں میں پینتیس سے زائد پروازیں منسوخ ہوئیں، کراچی سے اندرون ملک جانے والی تین پروازیں جبکہ دبئی،دمام، برمنگھم، مانچسٹر، ابوظہبی جانیوالی کئی بین الاقوامی پروازیں منسوخ ہوئیں اور متعدد تاخیر کا شکار ہوئیں۔

مشیرہوابازی شجاعت عظیم کا کہنا ہے کہ پالپا کے اقدامات سے حکومت ہرگز بلیک میل نہیں ہوگی،اور نہ حج آپریشن کسی صورت متاثرہوگا, اگر معاملات حل نہ ہوئے تو فریقین کو آج اسلام آباد طلب کریں گے۔

شجاعت عظیم نے کہا کہ پالپا کے اقدامات سے حکومت بلیک میل نہیں ہوگی مگر پائلٹ کے جائز مطالبات تسلیم کیے جائینگے، انہوں نے تنبیہ کی کہ پالپا انتظامی معاملات میں دخل اندازی نہ کرے، شجاعت عظیم نے کہا کہ حج آپریشن کے جاری رہنے کی ہدایات کر دی گئی ہیں۔

اس سے قبل پی آئی اے کے چیئرمین ناصر جعفر میڈیا نے گفتگو سے میں کہا کہ قومی ائیر لائن سب کی ہے ،لہذا مل بیٹھ کرمسائل کیے جائیں۔

پالپا کے صدر عامر ہاشمی نے اس موقع پر کہا کہ انتظامی نا اہلی کا ملبہ پائلٹس پر ڈالنا درست نہیں ، اضافی ڈیوٹی اور پائلٹس کے بے وجہ لائسنسوں کی منسوخی کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا۔

صدر پالپا عامر ہاشمی کا کہنا ہے کہ معاملات پی آئی اے کو اونے پونے دام بیچنے کیلئے بگاڑے جارہے ہیں۔

اےآروائی نیوز سے گفتگو میں عامر ہاشمی نے کہا مشیر ہوا باز شجاعت عظیم ذاتی کاروبار کیلئے قومی ایئرلائن کو نقصان پہنچا رہے ہیں، پی آئی اے خود مسئلہ حل نہیں کرنا چاہتی، ایوی ایشن پالیسی سے پی آئی اے کو کوئی تحفظ نہیں ملا، چیئرمین پی آئی اے کو ایوی ایشن کا کوئی تجربہ نہیں، شجاعت عظیم نے ذاتی کاروبار کیلئے پی آئی اے سروسزکو سائیڈ لائن کر رکھا ہے۔

ترجمان سول ایوی ایشن شیرعلی خان نے امید ظاہر کی ہے کہ پالپا اور پی آئی اے کا تنازع آج حل ہوجائے گا، اے آروائی نیوز سے گفتگو میں ترجمان سول ایوسی ایشن نے بتایا کہ آج بریک تھرو کے امکانات ہیں، تنازع سے حج آپریشن اور دیگر مسافرمشکلات کا شکارہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں