The news is by your side.

Advertisement

پاناما کیس ، جے آئی ٹی آج قطری شہزادے کے خط پر غور کرے گی

اسلام آباد : پاناما کیس کی تحقیقات کیلئے بنائی جانے والی جےآئی ٹی آج قطری شہزادے کے خط سمیت بیرون ملک سے تصدیق شدہ دستاویزات کے حصول کیلئے حکمت عملی پر غور کرے گی۔

تفصیلات کے مطابق جےآئی ٹی سپریم کورٹ کا دیا گیا ٹاسک مکمل کرنے کیلئے متحرک ہے، شریف خاندان نے بیرون ملک اثاثے کیسے بنائے؟سرمایہ کہاں سے آیا منتقلی کے ذرائع کیا تھے؟ تیرہ سوالات کے جواب کی کھوج میں جوائنٹ انوسٹی گیشن ٹیم آج چھٹے روز الیکشن کمیشن کی جانب سےفراہم کردہ وزیراعظم نوازشریف اورداماد کیپٹن صفدر کے تین سالہ ریکارڈ کا باریک بینی سے جائزہ لیا جارہا ہے۔

ذرائع کے مطابق جے آئی ٹی ٹیم ڈائریکٹرایف آئی اے واجد ضیا کی سربراہی میں قطری خط کے حوالے سے امور پر غور کرنے کے ساتھ پاناما پیپرز سے متعلق بیرون ملک سے تصدیق شدہ دستاویزات کے حصول کیلئے حکمت عملی پر بھی مشاورت کریں گے۔


مزید پڑھیں : جے آئی ٹی نے الیکشن کمیشن سے وزیر اعظم کے گوشوارے طلب کرلیے


پانچویں بیٹھک میں الیکشن کمیشن سےنواز شریف کے بتیس سال کےاثاثوں کی تفصیلات طلب کیں تھیں اور ساتھ ہی حدیبیہ پیپرزملز سےمتعلق سترہ سال پرانے ریفرنسزکا ریکارڈ دینے کی بھی ہدایت کی ہے۔

ذرائع کے مطابق جے آئی ٹی نے 1985 سے لے کر اب تک کی تمام تفصیلات طلب کی ہیں اور اس کے لیے الیکشن کمیشن کو 3 دن کا وقت دیا ہے۔

زرائع کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن نے سنہ 2002 سے پہلے کی تفصیلات فراہم کرنے سے معذوری ظاہر کردی۔ کمیشن 2002 سے اب تک کی تفصیلات فراہم کر سکتا ہے۔

الیکشن کمیشن کے ذرائع کا کہنا ہے کہ جے آئی ٹی کو بھی یہی جواب دیا جارہا ہے۔ سنہ 2002 سے قبل اثاثوں کی تفصیلات کا قانون ہی نہیں تھا۔

واضح رہے کہ عدالت عظمیٰ کی جانب سے تشکیل دی گئی  جے آئی ٹی ہر 15 روز بعد رپورٹ بینچ کو پیش کرنے اور 60 دن میں تحقیقات مکمل کرنے  کی پابند ہے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں