site
stats
اہم ترین

پانامہ لیکس : مجھ پرالزام ثابت ہوا تو گھرچلا جاؤں گا، وزیراعظم نوازشریف

اسلام آباد : وزیراعظم میاں نواز شریف نے کہا ہے کہ میں پانامہ لیکس کے حوالے سے چیف جسٹس کو کیمیشن کی تشکیل کیلئےخط لکھوں گا اور کمیشن کے ہر فیصلے کومن وعن تسلیم کروں گا۔

انہوں نے کہا کہ اگر مجھ پر کوئی الزام ثابت ہوا تو لمحے کی تاخیر کئے بغیر گھر چلا جاؤں گا، ان خیالات کا اظہارانہوں نے سرکاری ٹی وی پر قوم سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ میں اور میرے خاندان کا جینا اور مرنا پاکستان کے ساتھ ہے، خود کو اوراپنے پورے خاندان کو احتساب کیلئے پیش کرتا ہوں۔ہماری حکومت کرپشن کے خاتمے پر یقین رکھتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں تو اس کا تنخواہ کا حساب دینے کو تیار ہوں جو میں بطور وزیر اعظم نہیں لیتا،ہمارے تمام اثاثوں کی تفصیل انکم ٹیکس کے گوشواروں کی صورت میں موجود ہیں۔ اس وقت سے ٹیکس دے رہے ہیں جب کچھ لوگوں کو ہجے بھی نہیں آتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ میڈیا کے نمائندوں اور دوستوں سے درخواست ہے کہ کوئی بھی الزام نشر کرنے سے پہلے اس کی جانچ کریں۔

کچھ لوگوں نے اپنے طور پر عدالت لگا کر فیصلے کر لئے۔ انہوں نے کہا کہ دھرنے کی سرکس کے دوران اربوں روپے کا نقصان ہوا اس کا حساب کون دے گا؟

انہوں نے کہا کہ پاناما لیکس کو بنیاد بنا کر پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے, حالانکہ میر ی ذات پر کسی قسم کا کوئی الزام نہیں ہے لیکن اس معاملے کے منظر عام پر آنے کے بعد قوم کو اعتماد میں لیا۔

ان کا کہنا تھا کہ پاناما لیکس کے معاملے پر لگائے جانے والے الزامات پرانے ہیں جن کی چھان بین 90کی دہائی میں ہوئی اور مشرف دور میں بھی اس کی تحقیقات کی گئیں لیکن کچھ بھی ثابت نہیں ہو سکا۔

نواز شریف کا کہنا تھا کہ میں اس کمیشن کا فیصلہ قبول کروں گا لیکن اگر میری ذات پر الزامات ثابت نہ ہوئے تو بہتان تراشی کرنے والے لوگ قوم سے ہاتھ جوڑ کر معافی مانگیں اور یہ فیصلہ قوم نے کرنا ہے کہ کیا ایسے لوگوں کو معاف کرنا ہے؟

 

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top