site
stats
پاکستان

کراچی: پاسپورٹ آفس کے 663 ملازمین تنخواہوں سے محروم

کراچی: پاسپورٹ آفس کے 663 ملازمین کو دو ماہ سے تنخواہ سے محروم ہیں، متعدد شکایات کے باوجود حکام نے کوئی کارروائی نہ کی، ملازمین کا کہنا ہے کہ حکومت نوٹس لے، گھروں کا چولہا جلانا بھی ممکن نہیں رہا۔

تفصیلات کے مطابق ملک کے حساس ادارے پاسپورٹ اینڈ امیگریشن آفس کے 663 سے زائد ملازمین دو ماہ سے بغیر تنخواہ کے کام کررہے ہیں، وفاقی وزیر داخلہ کو تنخواہوں کی ادائیگی اور کنٹریکٹ بحالی کے خطوط بھی تحریر کیے گئے لیکن ملازمین کا کچھ بھلا نہ ہوا۔

ذرائع کے مطابق ڈائریکٹر جنرل امیگریشن اور پاسپورٹ سروس نے مشین ریڈ ایبل پاسپورٹ پروجیکٹ فیز 1کے لیے 2004 میں 28ریجنل آفس اور 10 غیر ممالک میں دفاتر کے لیے 209 افراد کو بھرتی کیا تھاان میں سے 158 کو 2013 میں مستقل کردیا گیا جب کہ 51 افسر مستقلی کی تقرر نامے ملنے کی امید پر کام کررہے ہیں۔

فیصلہ ہمارے حق میں آچکا، ادارہ توہین عدالت کا مرتکب ہورہا ہے، افسر

پاسپورٹ اینڈ امیگریشن افسران نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ کنٹریکٹ مستقل نہ کیے جانے پر اسلام آباد ہائی کورٹ سے رجوع کیا اور فیصلہ ہمارے حق میں آگیا تاہم ابھی تک عدالت کے فیصلے پر عمل درآمد نہیں کیا گیا اور ادارہ توہین عدالت کا مرتکب ہو رہا ہے۔

افسر نے مزید بتایا کہ نئے وزیر داخلہ کو بھی تنخوہوں کی ادائیگی کے لیے خط تحریر کر دیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ 2006ء میں مشین ریڈایبل پاسپورٹ کے دوسرے مرحلے میں مزید 65 ریجنل پاسپورٹ آفس اور 83فارن مشن بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

ان دفاتر کے لیے 663 ملازمین کو بھرتی کیا گیا، 155 اندرون ملک اور بیرون ملک قائم 90 پاسپورٹ دفاتر سے محکمہ 20 ارب روپے سالانہ پاسپورٹ فیس کی مد میں خزانے میں جمع کراتا ہے لیکن ملازم دو ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں جس کی وجہ سے گھریلو مالی پریشانیوں میں دن بدن اضافہ ہو رہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top