The news is by your side.

Advertisement

پی ڈی ایم جلسے میں شدید بدنظمی، متعدد اہم رہنماؤں کو اسٹیج پر جانے سے روک دیا گیا

لاہور: مینار پاکستان میں جاری پی ڈی ایم جلسے میں شدید بدنظمی دیکھنے میں آ رہی ہے، متعدد اہم رہنماؤں کو اسٹیج پر جانے سے روک دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالمالک بلوچ کو اسٹیج پر جانے سے روک دیا گیا، جس پر وہ ناراض ہو کر واپس جانے لگے تو رضاکاروں نے ان سے معافی مانگی۔

روکے جانے کے بعد ڈاکٹرعبد المالک بلوچ نے اسٹیج پر جانے سے ہی انکار کر دیا، ان کا کہنا تھا 3 بار پنڈال میں جانے کی کوشش کی لیکن اندر نہ جا سکا، اب تقاریر پنڈال پر نہیں بلکہ نیچے کھڑے ہو کر سنوں گا۔

ادھر پی پی سینئر رہنما ثمینہ خالدگھرکی کو بھی اسٹیج پر جانے نہیں دیاگیا، جس پر وہ بھی ناراض ہو کر واپس روانہ ہو گئیں، ان کا کہنا تھا اس قدر بدنظمی اور بد تمیزی ہے کہ اوپر بھی نہیں جا سکی، بلاول اسٹیج پر ہیں اس لیے بدنظمی پر بات نہیں کرنا چاہتی۔

پی ڈی ایم جلسے میں کتنے لوگ شریک؟

دوسری طرف پی ڈی ایم جلسہ شروع ہو چکا ہے، میاں افتخار حسین خطاب کرتے ہوئے جلسے میں قراردادیں پیش کیں، قرارداد میں کہا گیا تھا کہ اٹھارویں ترمیم کسی صورت نہ چھیڑی جائے، صوبائی خودمختاری کو یقینی بنایا جائے، دوبارہ الیکشن ہوں جو مداخلت سے پاک ہو، لاپتا افراد کو عدالت کے سامنے پیش کیا جائے۔

قرارداد کے مطابق پی ڈی ایم وفاقی اور صوبائی نظام پر کمپرومائز نہیں کرے گا، پمز اسلام آباد کے ملازمین کی برطرفی کی مذمت کرتے ہیں، گوادر شہر میں لگائی گئی باڑھ کی مذمت کرتے ہیں اسے فوراً ہٹایا جائے۔

واضح رہے کہ جلسے کی تعداد کے حوالے سے مختلف آرا سامنے آ رہی ہیں، پولیس ذرائع کے مطابق جلسے میں 8 ہزار سے ساڑھے 8 ہزار لوگ موجود ہیں، اسپیشل برانچ کے مطابق ساڑھے 9 ہزار سے 10 ہزار لوگ موجود ہیں، جب کہ آزاد ذرائع کے مطابق جلسے میں 9 ہزار سے 10 ہزار افراد موجود ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں