The news is by your side.

Advertisement

’عمران خان اسٹیبلشمنٹ سے لڑائی کے بجائے سیاسی مخالفین کو ہٹ کریں‘

اسپیکر پنجاب اسمبلی اور صدر مسلم لیگ ق چوہدری پرویز الہیٰ کا کہنا ہے کہ عمران خان اسٹبلشمنٹ سے لڑائی کے بجائے سیاسی مخالفین کو ہٹ کریں، عمران خان اور اسٹیبلشمنٹ تعلقات میں بہتری کیلئے اپنا کردار ادا کرنے کو تیار ہیں۔

غیرملکی جریدے کو انٹرویو دیتے ہوئے اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الہیٰ نے کہا کہ جب بھی عمران خان سے ملاقات ہوتی ہے ان سے کہتا ہوں اسٹیبلشمنٹ سے لڑائی نہیں کرنی، ہمارا ہدف ہمارے سیاسی مخالفین ہونے چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ اس سے زیادہ نیوٹریلٹی کیا ہوگی، عدم اعتماد کامیاب ہو گئی، اسٹیبلشمنٹ نے کچھ نہ کیا۔

چوہدری پرویز الہیٰ نے کہا کہ عمران خان دور میں خارجہ پالیسی پر اسٹیبلشمنٹ سے اونچ نیچ ہوتی رہی، اور معاملات حل بھی ہوتے رہے، کوشش ہے عمران خان اور اسٹیبلشمنٹ کے تعلقات بہتر ہوں۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان چاہتے ہیں قومی اسمبلی کے الیکشن فوری ہوں، جبکہ صوبائی حکومتیں اپنی مدت پوری کریں، عمران خان کا لانگ مارچ کا عندیہ اسی لیے ہے کہ جلد نئے الیکشن ہوں۔

پرویز الہیٰ نے کہا کہ اب شہباز شریف کیوں بیساکھیاں تلاش کر رہے ہیں؟، یہ کیوں کسی کو ملوث کرنے کی کوشش کر رہے ہیں؟، اب یہ حکومت کریں اور ڈیلیور کر کے دکھائیں، اشیا کی قیمتیں نیچے لے کر آئیں اور بجلی کا مسئلہ ٹھیک کریں، معیشت کو فوری سہارا نہ ملا تو حالات قابو سے باہر ہوسکتے ہیں۔

شریف برادران سے متعلق سوال پر ان کا کہنا تھا کہ شریف برادران سے ہمارا ٹریک ریکارڈ اتنا اچھا نہیں تھا، انہوں نے ہر موقع پر ہمیں دھوکا دیا، 22 سال ن لیگ کے ساتھ رہے، کئی مواقع پر دھوکا دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: پرویز الہٰی کا قائم مقام گورنر بننے سے انکار، پنجاب میں آئینی بحران پیدا ہوگیا

چوہدری شجاعت سے اختلافات سے متعلق سوال کا جواب دیتے ہوئے چوہدری پرویز الہیٰ نے کہا کہ ہمارے درمیان کوئی اختلاف نہیں ہیں، طارق بشیرچیمہ موجودہ حکومت میں وزیر ہیں، وہ مسلم لیگ (ق) کے جنرل سیکریٹری بھی ہیں، جیسے ہی وزارتیں ختم ہوں گی تو سب گھر واپس آ جائیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں