The news is by your side.

Advertisement

این آراوملکی مفاد میں بنایاگیا : پرویز مشرف کا عدالت کو جواب

اسلام آباد: سابق صدر جنرل (ر) پرویزمشرف نےاین آراونظرثانی کیس میں سپریم کورٹ میں جواب جمع کرادیا، جواب میں سابق صدر کا کہنا ہے کہ این آراوکاقانون ملک کےمفادمیں بنایاگیا۔

تفصیلات کے مطابق این آر او کیس میں جواب ان کے وکیل اختر شاہ کی جانب سے عدالتِ عظمیٰٰ میں جمع کرایا گیا، سابق صدر پرویز مشرف، ان کے بچوں اور داماد کو نیب نے اثاثہ جات کیس میں بھی طلب کررکھا ہے۔

وکیل کی جانب سے جمع کرائے گئے جواب میں کہا گیا ہے کہ این آراوکا مقصدعوامی عہدے رکھنےوالوں میں اعتمادپیداکرناتھا، اور اس کا دوسرا سب سے اہم مقصدانتقام کی سیاست خاتمہ کرناتھا ۔

یاد رہے کہ پرویز مشرف کے وکیل مشرف اختر شاہ نے چار جولائی کو ہونے والی سماعت میں جواب جمع کرانے کے لیے 2 ہفتے کی مہلت مہلت طلب کی تھی اور اس وقت کہا تھا کہ ہمیں کل ہی نوٹس ملا ہے، پرویزمشرف عدالتوں کااحترام کرتے ہیں۔

اپنے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ این آر او کے لیے وزیراعظم نے ایڈوائس بھیجی تھی، اس کا مقصد قومی مفاہمت کا فروغ ، باہمی اعتماد میں اضافہ، سیاسی انتقام کا خاتمہ اور انتخابی عملی کو شفاف بنانا تھا۔

جنرل (ر) پرویز مشرف نے سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے جواب میں کہا کہ این آراو کسی بدنیتی سے جاری نہیں کیا گیا بلکہ اس وقت کے سیاسی حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ قانون بنایا گیا، انہوں نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ این آراو کا اجرا کرکے کوئی غیرقانونی کام نہیں کیا گیا۔

انہوں نے اپنے جواب میں یہ بھی کہا کہ اس وقت کی سپریم کورٹ نے این آراو کو کالعدم قرار دے دیا تھا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں