site
stats
پاکستان

احسان اللہ احسان کو رہا نہ کیا جائے، عدالتی حکم

رپورٹ: عثمان دانش 

پشاور: ہائی کورٹ نے کالعدم شدت پسند گروپ تحریک طالبان پاکستان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کو رہا نہ کرنے کے احکامات جاری کردیے۔

نمائندہ اے آر وائی عثمان دانش کے مطابق کالعدم جماعت تحریک طالبان پاکستان کے سابق ترجمان اور کمانڈر کی ممکنہ رہائی کے خلاف پشاور ہائی کورٹ میں فضل خان ایڈوکیٹ نے درخواست دائر کی۔

جسٹس روح الامین اور جسٹس سید افسر شاہ پر مشتمل ڈویژن بینچ نے درخواست کی سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ کے فیصلے کو برقرار رکھنے ٹی ٹی پی کے سابق ترجمان کو رہا نہ کرنے کے احکامات جاری کیے۔

درخواست گزار کے وکیل بیرسٹر عامر خان چمکنی نےسماعت کے دوران عدالت کو آگاہ کیا کہ احسان اللہ احسان سانحہ آرمی پبلک اسکول کا ماسٹر مائنڈ ہے اور اسی نے واقعے کی ذمہ داری بھی قبول کی۔

مزید پڑھیں: پاک فوج کی کارروائیوں سے تنظیم میں مایوسی پھیل گئی‘ احسان اللہ احسان کا ویڈیو بیان

فضل خان ایڈوکیٹ نے عدالت کو دلائل دیتے ہوئے بتایا کہ احسان اللہ احسان معصوم بچوں کا قاتل ہے اس کے باوجود وہ ایک سال سے حکومت کا مہمان بنا ہوا ہے اور اُسے ابھی تک انصاف کے کٹہرے میں نہیں لایا گیا۔

درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی کہ تحریک طالبان کے سابق ترجمان کو کسی صورت رہا نہ کیا جائے جس پرپشاور ہائی کورٹ نے رہائی نہ دینے کے احکامات جاری کرتے ہوئے وفاقی حکومت سے اگلی سماعت پر جواب طلب کرلیا۔

یہ بھی پڑھیں: سانحہ اے پی ایس: احسان اللہ کو پھانسی دی جائے،متاثرہ والدہ

اسے بھی پڑھیں: احسان اللہ احسان کو معافی نہیں ملے گی، پاک فوج

واضح رہے کہ پاک فوج کے سوات اور دیگر قبائلی علاقوں میں کامیاب آپریشن کے بعد احسان اللہ احسان نے از خود گرفتاری پیش کی، تحریک طالبان کے سابق ترجمان کا ایک ویڈیو پیغام بھی گزشتہ برس منظر عام پر آیا تھا جس میں انہوں نے اعتراف کیا کہ پاکستان میں انتشار پھیلانے کے لیے بھارت طالبان کو استعمال کررہا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

loading...

Most Popular

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top