The news is by your side.

Advertisement

پشاور: خیبر ٹیچنگ اسپتال میں ڈاکٹر پر تشدد کے خلاف ڈاکٹرز کا احتجاج

پشاور: خیبر ٹیچنگ اسپتال میں ڈاکٹر پر تشدد کے خلاف ڈاکٹرز نے احتجاج کیا اور یونیورسٹی روڈ تھانے کے سامنے دھرنا دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق پشاور کے خیبر ٹیچنگ اسپتال میں صوبائی وزیرصحت اور ینگ ڈاکٹرز میں تصادم ہوگیا، اس دوران پروفیسرضیا شدید زخمی ہوگئے، پروفیسرضیا نےالزام لگایا کہ ان پر صوبائی وزیرصحت ڈاکٹر ہشام اللہ انعام کےگارڈز نے تشدد کیا۔

ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ ایف آئی آر درج ہونے تک دھرنا جاری رکھیں گے، احتجاجی ڈاکٹرز نے یونیورسٹی روڈ کو ہر قسم کی ٹریفک کے لیے بند کردیا۔

دوسری جانب صوبائی وزیرصحت کے گارڈ نےالزام لگایا کہ ایک ڈاکٹرنےانعام اللہ ہشام پرچاقو سےحملہ کرنےکی کوشش کی، اطلاعات کےمطابق واقعے میں وزیرصحت بھی زخمی ہیں۔

ڈاکٹر نیک داد نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ واقعے کا براہ راست ہم سے کوئی تعلق نہیں تھا، ڈاکٹر ضیا الدین کا مسئلہ فیکلٹی کا ایشو تھا، معلوم نہیں میٹنگ چھوٹے سے کانفرنس روم میں کیوں رکھی گئی۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر ضیا الدین نوشیروان برکی سے ملنا چاہتے تھے، ڈاکٹر ضیا الدین کی نوشیروان برکی سے کچھ تلخ باتیں ہوئیں، ڈاکٹر ضیا الدین نے نوشیروان برکی پر انڈے اچھالے۔

ڈاکٹر نیک داد نے کہا کہ واقعے کا پتا چلنے پر وزیر صحت بھی اسپتال پہنچ گئے، ڈاکٹر ضیا الدین نے وزیر صحت کے ساتھ بھی تلخ کلامی کی، مارپیٹ کے دوران ڈاکٹر ضیا الدین زخمی ہوئے۔

وزیر اعلٰی محمود خان نےواقعے کا نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کرلی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں