The news is by your side.

Advertisement

12 سے 15 سال کے بچوں کو فائزر کی بوسٹر ڈوز

واشنگٹن: امریکا میں 12 سے 15 سال کے بچوں کو فائزر کے بوسٹر شاٹس لگانے کی منظوری دے دی گئی۔

امریکا کے متعدی امراض کی روک تھام اور بچاؤ کے ادارے سی ڈی سی نے فائزر ویکسین کے بوسٹر شاٹس بارہ سے پندرہ سال کی عمر کے بچوں کو لگوانے کی منظوری دے دی۔

روئٹرز کے مطابق سی ڈی سی نے یہ فیصلہ ماہرین کی تجویز پر کیا ہے جن کے خیال میں کرونا ویکسین کی بوسٹر ڈوز بارہ سے پندرہ سال کی عمر کے بچوں کو لگوائی جا سکتی ہے۔

سی ڈی سی کی مشاورتی کمیٹی کے 13 اراکین نے اس کی حمایت کی، جب کہ کمیٹی کے ایک رکن نے اس فیصلے کے حق میں ووٹ نہیں دیا۔ کمیٹی نے یہ بھی کہا کہ سی ڈی سی کو 16 سے 17 سال کے نوجوانوں میں بوسٹر ڈوز لگوانے کی تجویز کو بھی تقویت دینی چاہیے۔

سی ڈی سی نے جاری بیان میں کہا ہے کہ بارہ سے سترہ سال کی عمر کے افراد کو فائزر کی دوسری ڈوز لگوانے کے پانچ ماہ بعد بوسٹر شاٹ لگوانا چاہیے۔

کمیٹی میں اسرائیل کی وزارت صحت کی جانب سے بھی ڈیٹا پیش کیا گیا جس سے معلوم ہوتا ہے کہ 12 سے 15 سال کے جن بچوں کو دوسری ڈوز لگوائے ہوئے 5 سے 6 ماہ گزر گئے تھے، ان میں بھی اومیکرون سے متاثر ہونے کی شرح اتنی ہی زیادہ تھی جتنی کے غیر ویکسین شدہ بچوں میں۔

ڈیٹا کے مطابق بوسٹر شاٹ لگوانے کے بعد اومیکرون سے متاثر ہونے کی شرح میں واضح کمی دیکھنے میں آئی۔

امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی (ایف ڈی اے) نے بھی پیر کو 12 سے 17 سال کے بچوں کو بوسٹر شاٹ لگوانے کی اجازت دے دی تھی، تاہم فائزر اور موڈرنا ویکسین لگوانے سے بالخصوص جوان مردوں میں دل کی سوزش ‘مائیو کارڈائٹس’ کے کیسز سامنے آنے کے پیش نظر چند سائنس دانوں نے بوسٹر شاٹ لگوانے پر خدشات کا اظہار کیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں