طیارہ حادثے کی تحقیقات سے قبل کسی قسم کے تبصرے سے گریز کیا جائے،برینڈ ہیلمڈ -
The news is by your side.

Advertisement

طیارہ حادثے کی تحقیقات سے قبل کسی قسم کے تبصرے سے گریز کیا جائے،برینڈ ہیلمڈ

کراچی : قومی ایئر لائن کےچیف ایگزیکٹیو آفیسر نے اپیل کی ہے کہ طیارہ حادثے کی تحقیقات سے قبل کسی قسم کے تبصرے سے گریز کیا جائے، برینڈ ہلمیڈ نے شہید افراد کے لواحقین سے اظہار تعزیت کی۔

چیف ایگزیکٹیو آفیسر پی آئی اے برینڈ ہیلمیڈ کا کہنا ہے کہ تحقیقات سے قبل کسی قسم کے تبصرے سےگریزکیا جائے، مفروضوں پر تحقیقات نہیں کر سکتے۔

برینڈ ہیلمڈ کا کہنا تھا کہ شفاف تحقیقاتی رپورٹ آنے تک ہم نہیں کہہ سکتے کہ طیارہ حادثے کا شکار کیسے ہوا؟

سی ای او پی آئی اے نے شہداء کے لواحقین سے اظہار تعزیت اور ہمدردی کرتے ہوئے کہا کہ میتیں ضروری ضابطے کے بعد لواحقین کےحوالے کرینگے، شہید افراد کی میتیں ہیلی کاپٹرز کے ذریعے ایوب میڈیکل کمپلیکس ایبٹ آباد سے پمز اسپتال اسلام آباد پہنچادی گئیں۔

بیشتر میتوں کو آبائی علاقے روانہ کرنے کیلئے انتظامات بھی مکمل کرلیے گئےہیں، میتیں پمز لانے کیلئے تین ہیلی کاپٹرز نے دو مرحلوں میں کام کیا۔


مزید پڑھیں : جہاز میں کوئی خرابی نہیں تھی، چیئرمین پی آئی اے کا دعویٰ


اس سے قبل دوسری جانب چیئرمین پی آئی اے نے دعویٰ کیا ہے کہ جہاز میں کوئی خرابی نہیں تھی، امید تھی کجہ طیارہ ایک انجن پر محفوظ لینڈنگ کر لے گا، جہاز مے ڈے کال کے بعد ریڈار سے غائب ہوگیا۔

انکا مزید کہنا تھا کہ تحقیقات کی جارہی کہ ایک انجن کے فیل ہونے پر حادثہ کیسے ہوا، چار بجکر نومنٹ پر کیپٹن نے انجن فیل ہونے کا بتایا جبکہ طیارہ چار بج کرسولہ منٹ پر ریڈار سے غائب ہوا۔

چیئرمین پی آئی اے کا کہنا تھا کہ حادثے کے شکار طیارے کا بلیک باکس مل گیا ہے، جسے ایس آئی بی کو بھجوائیں گے، جہاں سے وہ ڈی کوڈ ہو کر واپس آئے گا۔

انھوں نے بتایا کہ بدقسمت طیارہ 2007ء میں بنا تھا اور اسے اسی سال پی آئی اے کے فلیٹ میں شامل کیا گیا تھا ، ہمارے پاس 11اے ٹی آر طیارے ہیں اور یہ قابل اعتماد طیارے ہیں۔

چیئرمین پی آئی اے اعظم سہگل نے طیارہ حادثے میں شہید افراد کے لواحقین کے لیے معاوضے کا اعلان کیا ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں